اجودھیا میں بجرنگ دل کے کیمپ پر ایف آئی آر درج

پولس نے کہا ہے کہ یہ حفاظت نہیں منافرت اور مذہبی فساد کی تربیت ہے۔
bajrangdaltraining-300x209

نئی دہلی، ۲۶ مئی (حنیف علیمی): اجودھیا میں بجرنگ دل کے ذریعہ ہندو نوجوانوں کو رائفل، تلوار اور لاٹھی چلانے کی تربیت دینے والے کیمپ کے خلاف ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے۔

واضح ہو کہ 25 مئی کو ہم نے بجرنگ دل کے لوگوں کے ذریعہ اجودھیا میں ہندو نوجوانوں کو اپنی حفاظت کے نام پر کیمپ لگا کر بندوق، رائفل، تلواریں اور لاٹھی چلانے کی تربیت دینے کی خبر شائع کی تھی۔ اس کیمپ کے خلاف فیض آباد میں ایک ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے۔ یہ کیمپ ۱۴ مئی کو لگایا گیا تھا، جس میں ایک فرقہ کے لوگوں کو دہشت گرد دکھا کر ان سے لڑنے کے لئے رائفل، بندوق، تلوار اور لاٹھی چلا کر اپنی حفاظت کرنے جیسی باتوں سے معاشرے میں منافرت اور مذہبی تناؤ جیسی ذہنیت ہندو نوجوانوں میں پھیلانے کی کوشش کی گئی تھی۔ حالانکہ بجرنگ دل نے اسے اپنی حفاظت کے لئے تربیت بتائی ہے، لیکن اس کیمپ کی ویڈیو سے یہ کسی طرح بھی سیلف ڈیفینس (اپنی حفاظت) کی تربیت نہیں لگتی، بلکہ سراسر دو مذاھب کے درمیان ایک جنگ جیسی صورت حال نظر آرئی ہے۔ کیمپ کے ایک شخص نے یہ بھی کہا تھا کہ یہ ان لوگوں سے اپنی حفاظت کی تربیت ہے جو ہمارے بھائی نہیں ہیں۔ اس معاملے کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے فوراً پولس نے ایف آئی آر درج کرلی ہے۔

bajrang-dal-video_650x400_71464161872

سماجوادی پارٹی کے لیڈر راجیندر چودھری نے کہا ہے کہ الیکشن قریب آرہے ہیں، اس لئے بی جے پی اور بجرنگ دل کے لوگ مذہبی منافرت پھیلانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ پولس نے رپورٹ درج کرلی ہے، قانون کے مطابق کاروائی ہوگی۔ کانگریس لیڈر منیش تیواری نے کہا کہ جو لوگ قانون اپنے ہاتھ میں لیتے ہیں ان کے خلاف کاروائی ہونی چاہئے۔ جے ڈی یو لیڈر شرد یادو نے کہا کہ بجرنگ دل کے لوگ حفاظت کے نام پر دنگا پھیلا رہے ہیں، ان کو گرفتار کرنا چاہئے۔ یہ لو گ ماحول خراب کر نے کا کام کر رہے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *