اقلیتوں کو قرضے کی حقیقت

نئی دہلی: دہلی اقلیتی کمیشن کے نوٹس پر دلی ایس سی ؍ایس ٹی؍اوبی سی؍مائناریٹیز اینڈ ہینڈیکیپڈ فائنینشیل اینڈ ڈویلپمنٹ کارپوریشن نے اطلاع دی ہے کہ پچھلے مالی سال (۲۰۱۷۔۲۰۱۸) میں مذکورہ کارپوریشن کوقرضے کے لئے ۱۸ درخواستیں اقلیتوں کی طرف سے ملیں جن میں سے ۱۶ درخواستوں کو منظوری دی گئی، ایک کو نامنظور کیا گیا اور ایک درخواست ابھی زیر غور ہے۔ان قرضہ یافتگاں میں ۱۴ مسلمان اور ۲ (دو) سکھ ہیں جن کو مجموعی طور سے پندرہ لاکھ پچاس ہزار سات سو پچیس (۱۵۵۰۷۲۵)روپئے قرض دئے گئے ہیں۔ ظاہر ہے کہ دہلی میں اقلیتوں کی بڑی تعداد کو دیکھتے ہوئے یہ قرضے بہت ہی کم ہیں اور اس وجہ سے مذکورہ کارپوریشن کے وجود اور جواز پر سوال کھڑا ہوتا ہے۔ کمیشن نے مذکورہ کارپوریشن کے ذمہ داران کی میٹنگ بلائی ہے تاکہ مسئلے کی گہرائی تک جایا جاسکے۔

Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *