الیکشن کمیشن کا ممتا کو نوٹس، ممتا کا پلٹ وار

Mamta Banerjee

بیربھوم (مغربی بنگال)، ۱۴ اپریل (ایجنسیاں): آسن سول میں ایک انتخابی ریلی کے دوران ضابطۂ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے کی وجہ سے الیکشن کمیشن کے ذریعہ نوٹس کرنے سے ناراض وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے پلٹ وار کرتے ہوئے کہا کہ انھوں نے اس ریلی میں جو کچھ کہا تھا، اس کا انھیں کوئی افسوس نہیں ہے اور وہ اسے ہزاروں بار کہیں گی۔

یہاں آج ایک انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے ممتا نے کہا کہ ’’الیکشن کمیشن نے، میں نے جو کچھ کہا تھا، اس پر وجہ بتاؤ نوٹس جاری کیا ہے، لیکن میں اس پر افسوس ظاہر نہیں کروں گی اور ہزار بار کہوں گی۔‘‘

انھوں نے کہا کہ ’’اگر کوئی مجھ پر چوری کا الزام لگاتا ہے، تو میں اس سے جواب طلب کروں گی، کیوں کہ یہ میرا جمہوری حق ہے۔‘‘

الیکشن کمیشن کی طرف اشارہ کرتے ہوئے ممتا نے کہا کہ ’’وہ میرے پولس آفیسرس اور میرا ٹرانسفر کرنا چاہتے ہیں۔ لیکن، اگر مجھے یہاں دفن کیا گیا، تو آپ مجھے دہلی میں دیکھیں گے۔ مجھے کسی کا خوف نہیں ہے اور میں نے جو کچھ کہا، آج بھی اس پر قائم ہوں۔ یہ لوگ بی جے پی کی دھن پر رقص کر رہے ہیں۔ اس سے کام نہیں چلے گا۔ میں مقابلہ کرتی رہوں گی۔‘‘

آسن سول میں ۱۱ اپریل کو ووٹنگ ہوئی تھی اور ان پر الزام ہے کہ انھوں نے انتخابی ضابطۂ اخلاق کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ایک ریلی میں ایک نیا ضلع بنانے کی بات کہی تھی۔ اس پر چیف الیکشن کمشنر نسیم زیدی نے کہا کہ بنرجی نے آسام میں ایک ریلی کے دوران چند وعدے کیے ہیں، جو کہ انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہے۔ زیدی نے ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ ’’وجہ بتاؤ نوٹس اس لیے جاری کیا گیا ہے، کیوں کہ الیکشن کمیشن کو اس بات کی شکایت ملی تھی کہ آسن سول کو ضلع بنانے کا وعدہ کیا جا رہا ہے۔‘‘

اس سے پہلے الیکشن کمیشن نے آسام کے حکام کو تین دن پہلے ہدایت دی تھی کہ وہ آسام کے وزیر اعلیٰ ترون گوگوئی کے خلاف ایف آئی آر درج کریں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *