بہار شریف میں کیا گیا اردو ورکشاپ کا اہتمام

بہار شریف (محمد دانش): طے شدہ پروگرام کے مطابق مقامی صغریٰ ہائی اسکول کے وسیع ہال میں ہفتہ کو اردو ورکشاپ کا اہتمام کیا گیا۔ اے ڈی ایم نوشاد احمد نے شمع روشن کر کے ورکشاپ کا افتتاح کیا۔ واضح ہو کہ حکومت بہار کے اردو ڈائریکٹوریٹ کی ہدایت پر یہ ورکشاپ منعقد کی گئی۔ اس سے خطاب کرتے ہوئے نوشاد احمد نے کہا کہ صرف اردو کی فلاح وبہبود کی باتیں کرنے سے اردو کی ترقی کبھی ممکن نہیں ہے، بلکہ اس کے لیے سرکاری اور غیر سرکاری اسکولوں میں اردو کو لازمی قرار دیا جانا ضروری ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ صرف مشاعرہ کرنے اور بریانی کھانے سے بھی اردو کی ترقی ہوگی۔ ضروری ہے کہ اس کی ترقی کے لیے سنجیدگی کے ساتھ اہم فرائض انجام دیے جائیں ۔اس موقع پر ایس ڈی او جناردھن اگروال نے کہا کہ یہ نہایت ہی خوشی کی بات ہے کہ ہماری ریاست میں اردو کو دوسری سرکاری زبان کا درجہ حاصل ہے۔ اس کی ترقی کے لیے حکومت سے بارہا مطالبہ کیا جانا چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ ضرورت اس بات کی ہے کہ سرکاری اسکولوں، کالجوں اور مختلف طرح کے ہونے والے مقابلوں میں ہندی کی طرح اردو کو بھی لازمی طور پر شامل کیا جائے تاکہ اردو سے بھی لوگ پوری طرح واقف ہوسکیں۔ اس موقع پر صغریٰ ہائی اسکول کے پرنسپل ارشد استھانوی نے اردو زبان کے فائدے اور اس کی ضرورت پر کھل کر اپنی رائے پیش کی اور اپنے مفید مشوروں سے نوازا۔ ورکشاپ سے آفتاب حسن شمس، بے نام گیلانی اور تنویر ساکت نے بھی خطاب کیا۔ اردو ورکشاپ میں کثیر تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔

Facebook Comments
Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply