تاج الشریعہ ازہری میاں کا ۷۵؍سال کی عمر میں انتقال

بریلی(نامہ نگار): حضور تاج الشریعہ ازہری میاں مولانا مفتی محمد اختر رضا خان کا جمعہ کو یہاں محلہ سوداگران میں شام قریب ساڑھے سات بجے ۷۵؍ سال کی عمر میں انتقال ہوگیا۔ ان کے انتقال سے بریلی سمیت ہندوستان کے طول وعرض میں غم کی لہر دوڑ گئی۔ حضور تاج الشریعہ درگاہ اعلیٰ حضرت کے جانشین اور سرپرست اعلیٰ تھے۔ ان کے پسماندگان میں ایک بیٹا مولانا عسجد رضاخان اور پانچ بیٹیوں کے علاوہ دنیا بھر میں پھیلے مریدین ہیں۔ مولانا مفتی اختر رضا خان کا اصلی نام محمد اسمعیل رضا تھا۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم دارالعلوم منظر الاسلام میں حاصل کی اس کے بعد وہ عالمی شہرت یافتہ جامعہ ازہر قاہرہ ، مصر چلے گئے ۔ وہاں انہوں نے اپنی جماعت میں اول مقام حاصل کیا جس کے لیے وہاں کے صدر کرنل جمال عبدالناصر نے انہیں فخر ازہر کے ایوارڈ سے سرفراز کیا۔ علامہ ازہری میاں کے انتقال پر علمی، سماجی اور سیاسی شخصیات نے تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ حضور تاج الشریعہ کے انتقال پر مولانا یسین اختر مصباحی اور ادارہ شرعیہ پٹنہ ، بہار کے کارگزار صدر مولانا غلام رسول بلیاوی نے بھی اپنے گہرے رنج وغم کا اظہار کیا ہے۔ مولانا غَلام رسول بلیاوی نے کہا ہے کہ حضور تاج الشریعہ کا عالم اسلام میں بڑا مقام تھا اور وہ ایک فیصل کی حیثیت رکھتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ حضور تاج الشریعہ کا انتقال ایک ناقابل تلافی نقصان ہے، تاہم علماء کی نئی جماعت سے وہ امید رکھتے ہیں کہ حضرت ازہری میاں کے مشن کو مضبوطی کے ساتھ معاشرے کی اصلاح کے لیے آگے بڑھائیں گے۔
Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *