تمل ناڈو میں ۴۰ سیٹوں پر الیکشن لڑنا چاہتی ہے کانگریس

ڈی ایم کے چیف کروناندھی کے ہمراہ غلامی نبی آزاد، تصویر: بشکریہ ہندوستان ٹائمز
ڈی ایم کے چیف کروناندھی کے ہمراہ غلامی نبی آزاد، تصویر: بشکریہ ہندوستان ٹائمز

چنئی، ۲۵ مارچ (نامہ نگار): تمل ناڈو میں آئندہ ۱۶ مئی کو اسمبلی انتخابات ہونے ہیں، جس کو لے کر تمام پارٹیاں اپنی اپنی تیاریوں میں جٹی ہوئی ہیں۔ ملک کی دو سیاسی پارٹیاں، بی جے پی اور کانگریس خاص کر وہاں کی علاقائی پارٹیوں کے ساتھ اتحاد کرنے کے امکانات تلاش کرنے میں لگی ہوئی ہیں۔ اسی سلسلے میں آج کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد نے ڈی ایم کے چیف ایم کروناندھی سے ملاقات کی۔

میٹنگ کے بعد نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے غلام نبی آزاد نے کہا کہ ’’ہم نے ڈی ایم کے قیادت کے ساتھ انتخابی حکمت عملی پر بات کی ہے۔ ہم نے سیٹوں کے بٹوارے پر بھی بات کی۔ تاہم، سیٹوں کے بٹوارے کو لے کر ابھی کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔ ہم نے ڈی ایم کے کو سوچنے کے لیے وقت دیا ہے۔ ہم بھی اس پر سوچیں گے۔‘‘

دوسری جانب ڈی ایم کے لیڈر ایم کے اسٹالن نے بھی یہی بات کہی ہے کہ کانگریس لیڈر اپنی اعلیٰ قیادت کے ساتھ اس موضوع پر تفصیلی بات کریں گے، پھر آپس میں اتفاق ہونے کے بعد دوبارہ ہمارے پاس آئیں گے۔ اسٹالن نے نامہ نگاروں کو بتایا کہ ’’ہم نے کانگریس کے ساتھ سیٹوں کے بٹوارے پر بات کی، جس میں انھوں نے بعض شرطیں رکھی ہیں۔ ہماری بات چیت دوستانہ ماحول میں ہوئی۔ کانگریس لیڈر اپنی قیادت سے بات کرنے کے بعد ہمارے پاس آئیں گے۔‘‘

کانگریس نے ۲۳۴ سیٹوں والی تمل ناڈو اسمبلی کا گزشتہ انتخاب بھی ڈی ایم کے کے ساتھ مل کر لڑا تھا، جس میں اسے صرف ۵ سیٹوں پر کامیابی ملی تھی۔ حالانکہ ۲۰۱۴ کا لوک سبھا الیکشن کانگریس نے تمل ناڈو میں اکیلے ہی لڑا تھا۔ ذرائع سے ملنے والی خبروں کے مطابق کانگریس چاہتی ہے کہ ڈی ایم کے اسے ۴۰ سیٹوں پر الیکشن لڑنے کا موقع دے، تاہم ابھی اس پر دونوں پارٹیوں میں اتفاق رائے نہیں بنی ہے۔

سال ۲۰۱۱ میں ہونے والے پچھلے اسمبلی الیکشن میں تمل ناڈو کی کل ۲۳۴ سیٹوں میں سے اے آئی ڈی ایم کے کو ۱۵۰ سیٹیں ملی تھیں، جس کے بعد جے للتا وہاں کی وزیر اعلیٰ بنیں، جب کہ ۲۹ سیٹوں کے ساتھ ڈی ایم ڈی کے دوسرے نمبر پر، ۲۳ سیٹوں کے ساتھ ڈی ایم کے تیسرے نمبر پر رہی تھی۔ اُس وقت سی پی ایم کو ۱۰ اور سی پی آئی کو کل ۹ سیٹیں ملی تھیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *