تنظیم علماء اسلام نے مودی حکومت سے کر دی بڑی مانگ

نئی دہلی :مسلمانوں کی تعلیمی، اقتصادی، معاشی اور سماجی پسماندگی کے خاتمہ کے لیے ایک جامع منصوبہ بناکر اسے عملی جامہ پہنایا جائے۔اس سلسلے میں مسلم دانشوروں پر مشتمل ایک نگراں کمیٹی کی تشکیل ضروری ہے۔ سچر کمیٹی کی رپورٹ کے مطابق وقف سروس کمیشن کی تشکیل بلا کسی تاخیر کے کی جائے تاکہ ملک کی تمام ریاستوں کو کل وقتی آئی اے ایس افسران کی شکل میں ریاستی وقف بورڈوں کے سی ای او کے لیے مسلم افسر فراہم ہو سکیں۔
ان خیالات کا اظہاراتوار کو آل انڈیا تنظیم علماء اسلام کے زیراہتمام منعقدہ غریب نواز ورلڈ پیس کانفرنس میں شامل ملک کی مختلف ریاستوں کے علمائے کرام نے اپنی تقاریر کے ذریعے کیا۔ رام لیلا میدان میں منعقدہ اس تاریخ ساز کانفرنس کی صدارت امین ملت حضرت علامہ سید محمد امین میاں قادری وبرکاتی سجادہ نشین خانقاہ برکاتیہ قادریہ مارہرہ شریف نے کی جبکہ کانفرنس کی سرپرستی مفتی اعظم کیرالا حضرت شیخ ابو بکر قادری نے کی۔ شیخ نے اپنی تقریر میں اتحاد امت پر زوردیتے ہوئے تنظیم علماء اسلام کو قومی سطح پر سرگرم فعال کرنے کے لیے اپنے مکمل اشتراک وتعاون کا یقین دلایا۔ یہ کانفرنس امام احمد رضا  فاضل بریلوی رحمتہ اللہ علیہ کے عرس مبارک کے جشن صد سالہ کے موقع پر منعقد ہوئی۔ کانفرنس میں مہمان خصوصی کے طور پر علامہ سید خلیل بخاری کالی کٹ، الحاج سید معین اشرف معین میاں سجادہ نشین خانقاہ اشرفیہ کچھوچھہ شریف کے علاوہ دربار غریب نواز اجمیر شریف، کلیر شریف اور دیوہ شریف کے سجادگا ن نے شرکت کی۔ دیگر علماء میں حضرت مولانا منان رضا خاں بریلی شریف، مفتی سید شاہد علی رضوی قاضیٔ شرع رامپور، مولانا سید سلیم باپو گجرات، سید فرقان علی چشتی اجمیر شریف، مولانا شہاب الدین رضوی جنرل سکریٹری تنظیم علما اسلام اور قاری محمد میاں مظہری سکریٹری غریب نواز ایجوکیشنل اینڈ ڈیولپمنٹ کونسل کے نام قابل ذکر ہیں۔ کانفرنس کے اختتام پر دہشت گردی کے خلاف تنظیم کے سیکڑوں علما کے دستخطوں پر مشتمل ایک متفقہ فتویٰ بھی جاری کیا گیا۔ ہندوستانی مسلمانوں کے بنیادی مسائل کے حل پر ایک مشترکہ اعلامیہ بھی جاری کیا گیا جس کو پروفیسر حلیم خاں قادری سابق چیئرمین مدھیہ پردیش مدرسہ بورڈ نے پڑھ کر سنایا۔ کانفرنس میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی۔
کانفرنس میں پلوامہ میں ہونے والے دہشت گردانہ حملے کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے حکومت ہند سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ پاکستانی مقبوضہ کشمیر کو آزاد کرانے کے لیے عملی اقدامات کی حکمت عملی طے کرے کیونکہ یہی جانثاران وطن کو سب سے بڑا خراج عقیدت ہوگا۔ کانفرنس کے اختتام پر بارگاہ رسالت پناہ  ﷺ میں صلاۃ وسلام کا نذرانہ عقیدت پیش کیا گیا اور صدر اجلاس کی دعا پر کانفرنس اختتام پذیر ہوئی۔ ملک کی سلامتی ،فرقہ وارانہ اتحاداور ملک کی تعمیر وترقی کے لیے خاص طور پر دعا کی گئی۔
Facebook Comments
Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply