جشن غوث الوریٰ کا انعقاد

پریس ریلیز// گیارہویں شریف کے اس مبارک مہینہ میں غوث پاک کے دیوانے تو ہر طرح سے اپنی عقیدت کا اظہار کرتے ہیں ، اور بزرگان دین سے والہانہ محبت کو اپنے اپنے انداز میں پیش کرتے ہیں، انہیں میں سے ایک انجینئر منتقیم احمد صاحب بھی ہیں جنھوں نے عہد کیا تھا کہ جب میرا اپنا گھر دہلی میں ہوجائے گا تو میں خوب دھوم دھام سے گیارہویں شریف کا انعقاد کیا کروں گا۔ اللہ پاک نے اپنے محبوب کے صدقہ میں ان کی یہ عرضی قبول فرمالی۔
انہوں نے اپنا ایک شاندار گھر بٹلہ ہاؤس میں تعمیر کرایا ، جس میں اس بات کا بھی خیال رکھا کہ مکان کا جھجا بھی اپنی ہی زمین کی حدود میں رکھا جائے ، جس میں لوگ اکثر غفلت برتتے ہیں، گیارہویں شریف کے تعلق سے وہ کہتے ہیں کہ “میں ہر سال انتہائی عقدت کے ساتھ اس کا اہتمام کرتا ہوں ، یہاں تک کہ میں اپنے مہمانوں کے طعام کا انتظام بھی خود اپنے ہاتھوں سے ہی کرتا ہوں، میں پیشہ سے انجینئر ہوں مگر اس دن میں بارچی بن کر انتہائی عقدت سے کھانا تیار کرتاہوں۔ کیوں کہ مجھے اپنے علاوہ کسی بارچی کی پاکی وصفائی کا یقین نہیں ہوتا “۔ ان کے اس کام میں بھی ان کی شریک حیات پوری طرح ساتھ دیتی ہیں۔

جشن غوث الوریٰ

ان کے بڑے بیٹے اور امریتانجل کے ڈائریکٹر جناب گلزار کہتے ہیں کہ “ہم لوگوں نے اس مرتبہ تقریباً 150لوگوں کے طعام کا انتظام کیا تھا، جس میں ہر سال کی طرح اس سال بھی مدرسہ ابراہیمیہ مسجد خلیل اللہ کے طلبہ و اساتذہ اور دارالقلم کے طلبہ واساتذہ کے علاوہ قادری مسجد ، رضا مسجد ذاکرنگر کے ائمہ و موذنین کو بھی مدعو کیا تھا۔ “اس موقع پر حاضرین نے کہا کہ ان کے خلوص و محبت کا نتیجہ ہے کہ آج موسم خراب تھا بارش ہورہی تھی،ٹھنڈبڑھ گئی تھی باوجود اس کے ہم لوگ نے ان کی دعوت پر لبیک کہا۔ علماء کرام کے حسین بیانات اور شعرا کے پُر ترنم کلام نے عوام کو آخیر تک اپنی جگہ سے ہلنے نہیں دیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *