جے این یو طلبہ کی بھوک ہڑتاک ختم

Umar Khalid

نئی دہلی، ۱۴ مئی (محمد اقرار): جواہر لعل نہرو یونیورسٹی طلبہ کی ۱۶ دنوں سے جاری بھوک ہڑتال دہلی ہائی کورٹ کے اس فرمان کے بعد ختم کر دی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ یونیورسٹی کی کارروائی کے خلاف طلبہ کی پٹیشن پر اسی وقت سنوائی کی جائے گی جب طلبہ اپنی بھوک ہڑتال ختم کریں گے۔

عدالت کے اس حکم کے بعد کل رات تقریباً ۱۰ بجے، پچھلے ۱۶ دنوں سے جاری طلبہ کی بھوک ہڑتال ختم کرنے کا اعلان کر دیا گیا۔ بھوک ہڑتال ختم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے جواہر لعل نہرو ینیورسٹی اسٹوڈنٹ یونین کے سکریٹری راما ناگا نے کہا کہ ہم عدالت کے حکم کا احترام کرتے ہیں، اس لئے ہڑتال ختم کر رہے ہیں، لیکن مختلف مانگوں کو لیکر ہماری لڑائی جاری رہےگی۔ انہوں نے سبھی طلبہ، اساتذہ اور تحریک سے جڑے سبھی لوگوں کا شکریہ ادا کیا اور کہا کہ جے این یو کی تاریخ میں آپ سبھی کو یاد کیا جائے گا۔ ساتھ ہی وائس چانسلر ہر نشانہ سادھتے ہوئے راما ناگا نے کہا کہ وی سی صاحب کو بھی ان کے بے حس اور غیر ذمہ دارانہ رویّہ کے لئے جانا جائے گا ۔

JNU

اس موقع پر بھو ک ہڑتال پر بیٹھے کچھ طلبہ کے والدین بھی آئے ہوئے تھے۔ عمر خالد کے والد اور ویلفیر پارٹی آف انڈیا کے صدر سید قاسم رسول الیاس نے کہا کی جے این یو کو ۹ فروری کے معاملے میں پلاننگ کے ساتھ نشانہ بنایا گیا تھا، کیونکہ یہاں کے طلبہ مرکزی حکومت کے عوام مخالف ایجنڈوں کے خلاف سڑکوں پر اتر آتے ہیں۔ انہوں نے میڈیا پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ کچھ چینلوں اور اخباروں کو چھوڑ کر باقی کا کردار جے این یو کے بارے میں شرمناک رہاہے۔ ساتھ ہی طلبہ اور اساتذہ کو فاشسٹ اور فرقہ پرست طاقتوں کے خلاف لڑنے پر مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہا کہ ہم آپ کے ساتھ ہیں۔ عمر خالد کی والدہ نے کہا کہ ہماری محبت کبھی آپ لوگوں کی کمزوری نہیں بنے گی، ہماری دعائیں آپ کے ساتھ ہیں۔

جواہر لعل نہرو یونیورسٹی اسٹوڈنٹ یونین کی سابق سکریٹری چنٹو کماری کے والد رام نریش نے بیٹی کے بارے میں پوچھے جانے پرجواب دیا کہ بیٹی بھوک ہڑتال پر تھی تو فکر ہوتی تھی، مگر ساتھ ہی ساتھ فخر بھی ہوتا تھا کہ ہماری بیٹی انصاف کی لڑائی لڑ رہی ہے۔

جواہر لعل نہرو ٹیچرس ایسو سی ایشن کے صدر اجے پٹنائک نے طلبہ کو جوس پلا کر بھوک ہڑتال ختم کرائی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *