زعفرانی سیاست

پروفیسر محمد سجاد

قسط 3

اردو قارئین کے لئے، اس تیسری قسط میں، ہم آج گورکھ پور کی بات کرین گے۔ بہ وجوہ دانشوروں اور صحافیوں میں گورکھ پور کی سیاست کے تئیں دلچسپی بڑھی ہے۔ اکچھے مکل نے 2015 میں ایک عمدہ کتاب شائع کی، گیتا پریس اینڈ دی میکنگ آف ہندو انڈیا۔ اس کتاب اور اس موضوع پر بھی بات کی جائے گی۔ فی الوقت ہمارا سروکار ہندو یووا واہینی سے ہوگا۔ دھیریندر کمار جھا نے 2017 میں ایک کتاب شائع کی، شیڈو آرمیز: فرنج آرگینائیزیشنس اینڈ فٹ سولڈرس آف ہندوتو۔ اس میں ایک مختصر باب ہے ہندو یوا واہینی پر۔ ششانک چترویدی، ڈیوڈ گلنر اور سنجے کمار پانڈے نے ایک تحقیقی مضمون (2019) شائع کیا ہے جس میں گورکھ پور کی سیاست ، 1920 تا حال، کا بالتفصیل جائزہ لیا گیا ہے۔

گورکھ پور سے لگے ہوئے بہار کے اضلاع، سیوان، گوپال گنج اور شاہ آباد (بھوج پور) کے علاقوں میں راجپوت آبادی والی بستیوں میں، واہینی کا اثر بڑھنے لگا ہے۔ کرنی سینا کے نام سے بھی بہار کے دور افتادہ بستیوں تک میں فلم ، پدماوت (2018)، کے تعلق سے مسلم مخالف باتیں مقبول کرائ گئیں، اور 13-14ویں صدی کے سلطان علاؤالدین خلجی کے عہد کی غیر مصدق اور مفروضہ سیاسی باتوں کے لئے آج کے مسلمانوں کو ذمہ دار ٹھہرانے والی سیاست کے ذریعہ ، مسلم مخالف ماحول بنا کر ، ہندوتو کی سیاست کو تقویت پہنچانے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ ایسا سمجھا جانا چاہئے کہ بہار اسمبلی کے آئندہ انتخابات میں بھی ان زعفرانی کاوشوں سے استفادہ کرنے کی کوشش کی جائیگی۔

اس تعلق سے واہینی اور گورکھ پور کی سیاست کے تئیں مذکورہ تحقیقات کا خلاصہ اردو قارئین کی خدمت میں پیش ہے۔

یوں تو بودھ، جین اور سنت کبیر تحریک کی آماجگاہ بھی اسی خطے میں ہے، اور فروری 1922 میں چوری چورا ہنسا کی وجہ کر گورکھ پور نے تحریک آزادی میں خاص مقام بنالیا۔ آزادی کے بعد سماجواد ی تحریک کا اثر بھی خاصہ رہا۔ گورکھ ناتھ مندر اور مٹھ کی بھی ایک مخصوص تاریخ رہی ہے، جو وقت کے ساتھ بہت بڑی “تبدیلی کا شکار” ہو گئی۔ ایسا کہا جاتا ہے کہ اودھ نواب  آصف الدولہ (1775-1797) نے بابا روشن علی شاہ اور ان کے دوست بابا گورکھ ناتھ کو گورکھ پور کا علاقہ نصف نصف حصے میں عطا کر دیا تھا۔

ٹھا کر اجے موہن سنگھ بشت عرف مہنت یوگی آدتیہ ناتھ نے 1998 کے لوک سبھا الیکشن میں 26ہزار ووٹوں سے اپنے مخالف کو شکست دیا، 1999 میں محض سات ہزار ووٹوں سے اپنے مخالف کو شکست دے پائے۔ حالاں کہ الیکشن سے عین قبل ، فروری 1999 میں ہی ، انہوں نے پولرائیزیشن کی سیاست کو تیز کر دیا تھا۔ پچ رکھیا، (مہاراج گنج ضلع، اتر پردیش) میں ایک خوں ریز ٹکراؤ ہو گیا تھا جس میں سماج وادی پارٹی کی طلعت عزیز کے محافظ ستیہ پرکاش یادو کا قتل ہو گیا تھا۔ اس کے باوجود یوگی تک قانون کے لمبے ہاتھ پہنچنے سے قاصر رہے- ملائم سنگھ کی سرکار (2002-2007) کے دوران، یوگی تک ، قانون کے لمبے ہاتھ کی کوئ رسائ نہ ہو سکی

۔ (جب 2007 کا اسمبلی الیکشن قریب آیا، تو جنوری 2007 میں ، یوگی کی گرفتاری ہوئ، اور گیارہ دنوں تک وہ حراست میں رہے، اور اس کے بعد لوک سبھا میں اپنا درد آنسوؤں میں بیان کیا۔ تنازعہ محرم کے تعزیہ کے جلوس کو لے کر تھا- ان معاملات پر ایک اردو صحافی، پرویز پرواز، بہادری کے ساتھ، مقدمے لڑ رہے ہیں۔ اب ساٹھ برس سے زیادہ عمر، اور علالت کے باوجود ان کا حوصلہ پست نہیں ہوا ہے۔ )

اس کے بعد کے اتر پردیش کے اسمبلی الیکشن 2002 میں زعفرانی پارٹی کی ہار ہو گئی تھی، گرچہ، گورکھ پور لوک سبھا کے پانچ میں سے ایک اسمبلی حلقے سے یوگی کے امیدوار رادھا موہن اگروال نے جیت درج کرا لی تھی۔ لیکن اس پر یوگی خود اپنے لئے مطمئن نہیں ہو سکتے تھے۔

لہذا مارچ 2002 میں انہوں نے اپنی ایک تنظیم بنائ جس میں انہون نے گو رکچھا منچ کو ہندو یوا واہینی کا نام دے دیا۔ فروری 2002 میں گجرات فساد کے تحت ملک میں ایک فرقہ وارانہ کشیدگی کا ماحول یوں بھی بنا ہوا تھا۔ اس تنظیم کے قیام کے بعد ہی ، گورکھپور اور پڑوس کے اضلاع میں، ایک برس کے اندر، کم از کم، چھ فسادات ہوئے۔ اور 2007 تک فسادات کی تعداد 22 تک پہنچ گئی۔

2004 لوک سبھا میں انہوں نے اپنی جیت کا فرق بڑھا کر 142000 ووٹ کر لیا، اور 2009 میں یہ فرق مزید بڑھ کر تین لاکھ پر جا پہنچا۔ اور تقریباً ایسی ہی مضبوط جیت 2014 میں بھی درج کرائ ۔ 2017 میں یہ اتر پردیش کے وزیر اعلی بن گئے۔

مٹھ کا انتخابی سیاست سے تعلق زیادہ نیا نہیں ہے۔ ٹھا کر ننھو سنگھ عرف دگ وجے ناتھ ( 1894-1969) ،گورکھ ناتھ مندر کے مہنت ، رہے 1935 سے 1969 تک۔ انہوں نے 1939 میں ہندو مہاسبھا کی ممبرشپ اختیار کیا۔ ان پر مہاتما گاندھی کے قتل کی سازش کا الزام بھی لگایا گیا تھا۔ کرشنا جھا اور دھیریندر جھا کی تحقیقی تصنیف (2012)، ایودھیا، دی ڈارک نائٹ، کے مطابق 1949 میں ایودھیا کی بابری مسجد میں رام للا کی مورتی رکھنے میں بھی ان کا اہم کردار رہا ہے۔ تب یہ ہندو مہاسبھا کے قومی صدر بھی تھے۔ جون 1950 میں “اسٹیٹس مین ” اخبار میں دگ وجے ناتھ نے بیان دیا کہ مہاسبھا کی حکومت قائم ہونے پر کم از کم دس برسوں تک مسلمانوں سے حق رائے دہندگی چھین لی جائے گی اور اس درمیان مسلمانوں کو حب الوطنی کے امتحان سے گذرنا ہوگا۔ 1952 میں مہنت دگ وجے ناتھ نے ہی آر ایس ایس کا اسکول، سر سوتی شیشو مندر، کی پہلی یونٹ قائم کیا، اور وہ گورکھ پور ہی سے شروع ہوا۔ ان اسکولوں کی تعداد اب ملک بھر میں پھیل کر کئ ہزار ہو چکی ہے۔

سنہ 1962 میں یہ ایم ایل اے منتخب ہوئے اور 1967 میں ہندو مہاسبھا ہی کے ٹکٹ سے گورکھ پور کے ایم پی بھی منتخب ہوئے۔

ان کے جانشیں ، مہنت اویدیہ ناتھ (1921-2014) بھی الیکشن میں حصہ لیتے رہے۔

جنوری 31، 1989 میں ، وی ایچ پی نے ، الہ آباد کے کمبھ میلہ میں ، دھرم سنسد کیا، اور اس میں اویدیہ ناتھ نے بھی رام مندر کے تعلق سے تقریریں کیں۔  اور ہندو مہا سبھا سے گورکھ پور کے ایم پی منتخب ہوئے۔ 1991 اور 1996 میں بی جے پی کے ٹکٹ سے منتخب ہوئے۔ ستمبر 2014 میں، ان کے انتقال کے بعد ، یوگی آدیتیہ ناتھ اس مٹھ کے مہنت ہو گئے۔

یوگی کی ہندو یوا واہینی کا ایک خاص طریقہ کار ہے۔ جنوری سے فروری کے درمیان یہ دلتوں اور آدیباسی ؤں کے لئے “سہبھو ج ” کرتے ہیں ، جس میں ، اجتماعی طور پر ان کے ساتھ کھانا کھایا جاتا ہے، فروری سے مارچ کے درمیان ممبرشپ مہم چلائ جاتی ہے، مارچ سے مئ کے دوران ریلیاں وغیرہ کرائ جاتی ہیں۔ اویدیہ ناتھ نے 1983 سے ہی سم رہتا بھوج شروع کیا تھا، اور اس کا مقصد ذات پات کے احساس و عمل کو کم کرنا تھا۔

واہینی کی توسیع اب اتر پردیش کے مشرقی اضلاع اور ان کی بستیوں میں بڑے پیمانے پر ہو چکی ہے۔ پنچایتوں میں کم از کم 250 ممبران شرط ہے، اس سے قبل یونٹ کے قیام کا اعلان نہیں کیا جاتا ہے۔ 2005 سے واہینی کا ایک اخبار، ہند وی،  بھی چل رہا ہے، جو 2007 میں بند ہو گیا تھا۔ تنظیم پر لیڈرشپ کی سطح پر، بہر حال ٹھاکروں کا ہی غلبہ ہے۔راگھویندر سنگھ اور سنیل سنگھ ان میں اہم نام ہیں۔ حالاں کہ اوم پرکاش پاسوان نام کے دلت لیڈر کو بھی ایم ایل اے منتخب کروا کر واہینی کا سماجی آدھار بڑھا یا گیا تھا، لیکن دو برس کے اندر ہی اس کا قتل ہو گیا۔

مٹھ کے فنڈ سے سڑک، صحت و علاج کے لئے امداد، وغیرہ ، کا فلاحی کام بھی کیا جاتا ہے تاکہ وکاس پروش والی امیج بنی رہے۔ ساتھ ہے ساتھ گینگسٹر سیاست سے ایک خاص قسم کا تعلق رکھا جاتا ہے۔ مٹھ کے احاطے میں ون واسی کلیان چھاتراواس بھی قائم ہے

ٹھاکر ویریندر پرتاپ شاہی اور ہری شنکر تیواری کے درمیان گینگ وار چلتا رہا تھا۔ تیواری، 1985 سے، لگا تار چھ بار ایم ایل اے منتخب ہوا تھا۔ 1997 میں ٹھاکروں کے غلبہ کو ایک دھچکہ لگا جب شری پرکاش شکلہ گینگ نے ٹھاکر ویریندر کا قتل کر دیا تھا۔ (اس گینگ و ذات جنگ میں گورکھ پور یونیورسٹی اور اس کے طالب علم نیتاؤں کا مافیا ورلڈ سے تعلق بھی ایک اہم اور دلچسپ پہلو ہے۔ )

بہر کیف، یوگی نے ٹھاکروں کے اس غلبہ کو پھر سے قائم کرنے کا کام کیا ہے۔ اب وہاں کا نعرہ ہے، گورکھ پور میں رہنا ہے تو یوگی یوگی کہنا ہوگا۔ یہ نعرہ اب یوں بھی ہو گیا ہے، پوروانچل میں رہنا ہے تو یوگی یوگی کہنا ہوگا۔

آنے والے بہار اسمبلی انتخابات میں واہینی کے رول پر نظر رکھنے کی ضرورت ہے۔ 2013 کے بعد سے بہار میں فرقہ وارانہ تناؤ اور فساد میں اچانک اضافہ ہونے لگا ہے۔ گورول، ویشالی، میں اسی سال رونی تو گڑیا نے وہاں گؤ پشٹی کرن سنگٹھن قائم کیا۔ یوگی بھی وہاں پبلک میٹنگ کر چکے ہیں۔ ان پہلوؤں پر راقم نے کئ کالم لکھ کرقارئین کو آگاہ کیا تھا۔

محمد سجاد

(جاری)

Prof. Mohammad Sajjad (History)
AMU, Aligarh, India, 202002
Facebook Comments
Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply