کانگریس لیڈر نے شروع کی پیاسوں کو پانی پلانے کی انوکھی پہل

Imran_Congress Leader_Meerut

میرٹھ، ۷ مارچ (پریس ریلیز): گرمی کا موسم شروع ہو چکا ہے، لیکن ضلع انتظامیہ کے ذریعہ ابھی تک راہ چلتے لوگوں کے پانی پینے تک کے لیے کوئی مناسب انتظام نہ کیے جانے سے پریشان ہو کر ضلع کانگریس کمیٹی کے نائب صدر محمد عمران نے ایک انوکھی پہل کی ہے، جس کے تحت ایک چلتے پھرتے ٹھنڈے پانی کا پیاؤ شروع کیا گیا ہے۔

محمد عمران نے بتایا کہ ’’یہ چلتا پھرتا پیاؤ میڈیکل کالج، بس اڈّہ، ریلوے اسٹیشن، ضلع اسپتال پر چلایا جائے گا، کیو ںکہ ان جگہوں پر زیادہ تر غریب طبقے کے لوگ گاؤوں سے آتے ہیں اور پانی کی بسلری کی بوتل ۲۰ سے ۲۵ روپے کی ہونے کی وجہ سے نہیں خرید پاتے ہیں اور پیاس سے پریشان ہو کر جگہ جگہ بھٹکتے رہتے ہیں۔ اس لیے اس چلتے پھرتے پیاؤ کو آج ہم نے شروع کیا ہے۔ یہ خود بخود آپ کے پاس جا کر ٹھنڈا پانی پلائے گا اور گرمی سے لوگوں کو راحت دینے میں مدد کرے گا۔‘‘

محمد عمران نے بتایا کہ وہ جلد ہی اسی طرح کے ۱۰ اور پیاؤ کا انتظام کریں گے۔ ان کا الزام ہے کہ مرکزی و ریاستی حکومت پیاسوں کو پانی پلانے کا کوئی انتظام نہیں کر رہی ہے۔ انھوں نے یہ بھی بتایا کہ میرٹھ ضلع میں پہلے سے موجود پانی کے سبھی پیاؤ اب تقریباً ختم ہو چکے ہیں اور سرکار اس جانب کوئی دھیان نہیں دے رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ’’سال ۲۰۱۴ کے لوک سبھا الیکشن میں نریندر مودی جی نے عام لوگوں کا ووٹ حاصل کرنے کی خاطر خوب چائے پلائی اور اپنے آپ کو چائے والا بھی بتایا، لیکن آج ہمارے ملک میں بسلری پانی کی بوتل ۲۰ سے ۲۵ روپے کی ہو گئی ہے، لیکن الیکشن جیتنے کے بعد ایک بار بھی گرمی کے موسم میں نریندر مودی جی نے عام لوگوں کو ٹھنڈا پانی نہیں پلایا۔ عام لوگ گرمی میں ٹھنڈے پانی کو ترس رہے ہیں، لیکن اس پر کوئی دھیان نہیں دیا جا رہا ہے۔ ہم ریاستی حکومت سے بھی مطالبہ کرتے ہیں کہ وہ اس طرح کی پہل شروع کرکے لوگوں کو راحت دینے میں مدد کرے۔‘‘

اس چلتے پھرتے پیاؤ کے افتتاح کے وقت ریکن اہلووالیا، سویتا سومانی، روبینہ فریری، شمیم اصغر، روہتاش بھیا، نریندر اگروال، چودھری شمش الدین، پنڈت سشیل گوسوامی، فضلو پہلوان وغیرہ بھی موجود تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *