گری راج نے الیکشن کمیشن کو دکھایا انگوٹھا، مذہب کے نام مانگا ووٹ

نئی دہلی:
ایک طرف الیکشن کمیشن نے مذہب کے نام پرووٹ مانگنے پرسخت تنبیہ کی ہے لیکن بظاہراس کا کوئی اثرنہیں ہورہا ہے۔ مذہبی بنیادوں اورامورپرمسلسل بی جے پی لیڈران بیان بازیاں کررہے ہیں لیکن الیکشن کمیشن بدستورخاموش تماشائی بناہے۔ ایودھیا میں رام مندر بنانے کے بارے میں مرکزی وزیر گری راج سنگھ کا کہنا ہے کہ آپ لوگوں سے درخواست کرنا چاہتا ہوں کہ بار بار یہ بی جے پی اور انتخابات سے کیوں جوڑتے ہو، رام کیا صرف بی جے پی کے ایمان کا مرکز ہے، رام تمام سیاسی جماعتوں کے ہیں، کروڑوں ہندوؤں کے ہیں۔
گری راج سنگھ نے مزید کہا کہ رام کا مندر تو بنے گا لیکن کب بنے گا کس طرح بنے گا یہ تو وقت بتائے گا، میں ان لوگوں سے پوچھنا چاہتا ہوں کیا رام کا مندر ہندوستان میں نہیں بنے گا، ایودھیا میں نہیں بنے گا، تو کیا پاکستان میں بنے گا۔ ان کے پیروکار یہاں ہیں، جب ہم یہیں ہیں تو مندر یہیں بنے گا۔
اعظم خان کے مودی کو راون بتانے والے بیان پر گری راج کا کہنا ہے کہ جو لوگ راون کے پیروکار ہیں ان کو راون زیادہ یاد آتے ہیں، ہم تو رام کے پیروکارہیں۔ اعظم خان کے پاکستان نہ بٹا ہوتا تو وہ یہاں کے وزیر اعظم ہوتے، اس بیان پر گری راج سنگھ کا کہنا ہے کہ اب تو ان کو دوبارہ جناح کے ساتھ پیدا ہونا ہوگا۔ اس وقت تو پیدا نہیں ہوئے، اب خدا سے شکر کریں، عبادت کریں کہ پیدا لیتے تو کیا ہوتا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *