نوٹ بندی سے مرنے والوں کے اہل خانہ کو معاوضہ ملے: آپ

پٹنہ:
نوٹ بندی کے سبب عام لوگوں کو ہو رہی پریشانیوں کی مخالفت میں عام آدمی پارٹی کی جانب سے كوآارڈینیٹر منوج کمار کی قیادت میں ریزرو بینک آف انڈیا کے سامنے دھرنا دیا گیا. دھرنا میں کارکنوں نے ریزرو بینک آف انڈیا کے گورنر اور وزیر اعظم میں سانٹھ گانٹھ کا الزام لگاتے ہوئے ان کے خلاف نعرے بازی کی.
اس دوران منوج کمار نے کہا: “اپنے ارب پتی دوستوں کو قرض سے نجات دلانے کے لیے وزیر اعظم مودی نے نوٹ بندی’ کی ہے، یہ آٹھ لاکھ کروڑ کا گھوٹالا ہے. گذشتہ ہفتے 63 ارب پتیوں کا 6000 کروڑ روپے کا قرض معاف كرکے انہوں نے اس کا ثبوت دے دیا ہے. انہوں نے مزید کہا: “بغیر مناسب تیاری کے لاگو اس نوٹ بندی کے منفی اثر سے صحت، تعلیم، کاروبار، شادی بياه سب کچھ ٹھپ ہو گیا ہے، ملک کی معیشت پر خطرہ منڈلانے لگا ہے، عوام دن بھر بینکوں کے آگے قطار میں اپنے ہی پیسوں کے لیے گڑگڑا رہے ہیں. لوگ بے ہوش ہو کر موت کا شکار ہو رہے ہیں. ذرائع سے ملی خبر کے مطابق اب تک قریب سو افراد موت کے گلے لگ چکے ہیں جو تشویشناک ہے. ہماری پارٹی بینکوں کے آگے ہو رہی ان اموات کے لیے ریزرو بینک اور وزیر اعظم کو ذمہ دار مانتے ہوئے مرنے والوں کے اہل خانہ کو 20-20 لاکھ روپے مالی امداد دینے کا مطالبہ کرتی ہے.”
ریزرو بینک آف انڈیا کے سامنے دھرنا اور نعرے بازی کرتے آپ کے كوآرڈینیٹر منوج کمار کو پارٹی کارکنوں کے ساتھ گرفتار کر پولیس گاندھی میدان تھانہ لے گئی، جہاں بانڈ بھرواكر دیر شام انہیں رہا کردیا گیا.
اس موقع پر پارٹی کے سینئر لیڈر امر پرساد نے کہا کہ نوٹ بندی کی وجہ عوام کی پریشانیوں اور قطار میں ہو رہی اموات پر بہار کے وزیر اعلی کی خاموشی تشویش کا سبب ہے، کسی نے ٹھیک ہی کہا تھا کی نتیش کے پیٹ میں دانت ہے.
پاٹلپترا لوک سبھا حلقہ کے كوآرڈینیٹر ودیا بھوشن شرما نے کہا کہ وزیر اعظم نے قومیت کے نام پر گھوٹالے کو انجام دیا ہے. پندرہ دنوں سے مسلسل قطار میں کھڑے کھڑے عوام کا صبر جواب دے چکا ہے.
پارٹی کے حوالے سے میڈیا انچارج ببلو کمار پرکاش نے بیان جاری کرکے پوچھا ہے کہ جب ریزرو بینک آف انڈیا کے پاس نقدی نہیں تھی یا تیاری نہیں تھی تو کن حالات میں گورنر نے وزیر اعظم کے نوٹ بندی کی تجویز کو منظور کیا؟ عام آدمی پارٹی نے نوٹ بندی کی حمایت کرتے ہوئے کہا ہے کہ ناکافی تیاری کی وجہ سے ہو رہی اموات اور دیگر پریشانیوں کے پیش نظر ابھی دو تین ماہ کے لیے اسے ملتوی کرکے آگے پوری تیاری کے ساتھ لاگو کرنے کا مطالبہ کیا ہے.
آج کے دھرنا اور نعرے بازی میں سرگرم آپ اراکین میں دھننجے سنہا، روپم جھا، سادھوشرن چودھری، پروفیسر دنیش دیو، وشواس کمار، رنجیت کرشنا، محفوظ عالم، كرشن مراری گپتا، یوگیندر چودھری، ونے یادو، انجم باری، اروند کمار، اجے ٹھاکر، شاهین پرویز، دیشراج یادو، سوربھ شرما، آشوتوش گرائی، سومیش کمار، روی سہائے، ڈاکٹر راجیو سہائے، پرسون سنگھ راجپوت، منیش شرما، وکاس جھا، ارون یادو، ارجن یادو، دیپک کمار، ٹكو جی، نسیمہ خاتون وغیرہ شامل تھے.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *