امانت اللہ خان کواوکھلا میں دیا گیا استقبالیہ

newsنئی دہلی: اوکھلا سے ممبر اسمبلی اور وقف بورڈ کے چیئرمین امانت اللہ خان کا خیر مقدم وارڈ نمبر ۲۰۵؍کے انچارج محمود احمد کے گھرپراستقبالیہ دیا گیا۔ اس تقریب میں امانت اللہ خان کے علاوہ عام آدمی پارٹی کے دہلی پردیش کی اقلیتی کمیٹی کے چیئرمین فیروز احمد، پارٹی کارکن فیروز خان، انجینئر عرفان اور بڑی تعداد میں دوسرے لوگ موجود تھے۔ اس موقع پر امانت اللہ خان نے کہا کہ مجھے دہلی میں بہت بڑی ذمہ داری ملی ہے اگر اوکھلا کے لوگ مجھے پوری مدد کرتے رہیں تو میں یہ ذمہ داری بڑی ایمانداری سے ادا کر پاؤں گا۔ امانت اللہ خان نے کہا کہ جب مجھے یہ ذمہ داری ملی اور میں نے وقف بورڈ کیجائیدادکی معلومات نکالی تومجھے بہت ساری خامیاں ملیں، یعنی وقف بورڈ کے اب تک جوبھی چیئرمین تھے انہوں نے کچھ ایسا کیا کہ وقف کا نقصان ہی ہوا۔ بستی حضرت نظام الدین میں واقع ایک اسکول کی مثال دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ اسکول وقف کی زمین پر بنا ہوا ہے، کرایہ بھی بہت کم دیتا ہے اور مسلمانوں سے ہی لاکھوں کروڑوں کی کمائی کر رہا ہے۔

اس موقع پر آپ پارٹی کے وارڈ نمبر ۲۰۵؍ کے انچارج محمود احمد نے کہا کہ ابھی تک اوکھلا کو امانت اللہ جیسا ایماندار ممبر اسمبلی نہیں ملا تھا۔ وہ جیسا کام کر رہے ہیں ویسا کسی نے بھی نہیں کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ آہستہ آہستہ کر کے اوکھلا کی تمام پریشانیاں دور ہورہی ہیں اور اس کا کریڈٹ صرف امانت اللہ کو جائے گا۔ محمود احمد نے مزید کہا کہ اوکھلا سے رکن اسمبلی نے ایک ایسی ٹیم بنا دی ہے جو اس علاقہ کی ترقی کے لیے دن رات محنت کر رہی ہے۔ محمود نے کہا کہ میں ایک طویل عرصے سے اوکھلا میں سماجی کام کر رہا ہوں اور امانت بھائی کی محنت کو دیکھتے ہوئے مجھے بھی بہت کچھ کرنے کا حوصلہ ملا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر پارٹی آگے بھی موقع دے گی توایسے ہی کام کرتا رہوں گا۔ محمود نے کہا کہ میں عوام کی خدمت کے لیے ہمیشہ تیار رہتا ہو ں اور رہوں گا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *