چوتھے مرحلے میں ووٹنگ کا عمل جاری

سیوان ضلع کے تحت رگھوناتھ پور ہتھوڑہ گاؤں میں اپنی باری کے انتظار میں کھڑے ہیں۔(تصویر: مرغوب صدیقی)
سیوان ضلع کے تحت رگھوناتھ پور اسمبلی حلقے کے ہتھوڑہ گاؤں میں رائے دہندگان اپنی باری کے انتظار میں قطار میں کھڑے ہیں۔(تصویر: مرغوب صدیقی)

پٹنہ، یکم نومبر: بہار اسمبلی انتخابات کے لیے چوتھے مرحلے میں کل ۵۵ حلقوں میں ووٹنگ کا عمل جاری ہے۔ رائے دہندگان صبح سویرے سے ہی جمہوریت کے اس تہوار میں شرکت کرنے کے لیے پولنگ بوتھوں پر قطار میں کھڑے نظر آئے۔ اس مرحلے میں بھی خواتین اور نوجوان میں زیادہ جوش وخروش دیکھنے کو مل رہا ہے۔

ریاست کے سات اضلاع مشرقی چمپارن، مغربی چمپارن، سیتامڑھی، شیوہر، گوپال گنج، سیوان اور مظفرپورمیں آنے والے ان اسمبلی حلقوں میں کل ۷۷۶ امیدوار انتخابی میدان میں ہیں۔ ان امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ ایک کروڑ ۴۶ لاکھ سے زائد ووٹر کریں گے۔ ان میں ۷۸لاکھ سے زیادہ مرد رائے دہندگان ہیں جبکہ خواتین ووٹروں کی تعداد ۶۸لاکھ سے زائد ہے۔
آج جن اسمبلی حلقوں میں ووٹ ڈالے جارہے ہیں وہاں ۲۰۱۰کے اسمبلی انتخابات میں جنتادل متحدہ اور بی جے پی کے ۲۵۔

Siwan bihar assemply election 2015
ہتھوڑہ گاؤں،رگھوناتھ پور سیوان ضلع میں ایک خاتون ووٹر اپنے حق کا استعمال کرنے کے بعد ۔ (تصویر: مرغوب صدیقی)

 

۲۵امیدواروں نے جیت درج کی تھی جبکہ راشٹریہ جنتادل کے حصے میں دوسیٹیں آئی تھیں اور تین آزاد امیدوار کامیاب ہوئے تھے۔ سیاسی تجزیہ کار مانتے ہیں کہ ان اسمبلی حلقوں میں بی جے پی کا سخت امتحان ہے ، جبکہ انتخابی ہلچل پر نظر رکھنے والے بعض لوگ کہتے ہیں کہ بی جے پی جسے اپنا گڑھ مان رہی ہے، وہاں بھی اس کی ہار ہونے جارہی ہے۔ واضح ہوکہ ۲۰۱۴ کے لوک سبھا انتخابات میں ان ۵۵اسمبلی حلقوں میں سے ۴۲پر بی جے پی نے سبقت حاصل کی تھی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *