​بہار کے انتخابی نتائج سے ملک کو راحت ملی ہے: انل چمڑیا

نئی دہلی، ۲۲؍نومبر(نامہ نگار) : معروف صحافی اور تجزیہ کار انل چمڑیانے کہا ہے کہ بہار اسمبلی انتخابات میں عظیم اتحاد کی جیت دراصل سماجی یکجہتی ا ور اتحاد کی فرقہ پرست طاقتوں پر فتح ہے جس ​​ سے ملک کے بڑے حصے میں  لوگوں نے راحت کی سانس لی ہے۔ انہوں نے کہا کہ گذشتہ لوک سبھا انتخابات کے بعد مرکزمیں بی جے پی کے برسراقتدار آنے کے ساتھ ہی جس طرح سح فرقہ پرست طاقتوں نے اپنا سر ابھارنا شروع کیا، اس سے پرامن اور انصاف پسند شہریوں کو بڑی تشویش لاحق ہوگئی ہے۔لیکن بہار میں راشٹریہ جنتادل، جنتادل متحدہ اور کانگریس کے عظیم اتحاد کے مقابلے میں بی جے پی کی قیادت والے قومی جمہوری اتحاد کو ملی شکست سے ملک میں کشیدگی پھیلانے والی طاقتوں کے حوصلے تھوڑے پست ہوئے ہیں۔

انل چمڑیا نے کہا کہ ملک کے طول و عرض میں حالات کتنے خراب ہیں ، اس کا اندازہ اسی سے لگایا جاسکتا ہے کہ ایک جمہوری نظام میں ایک ریاست کے انتخابی نتائج کے بعد لوگ راحت کی سانس لے رہے ہیں۔

اسمبلی انتخابات کے نتائج آنے کے فوراً بعد ریاست کے مختلف حصوں میں فرقہ وارانہ کشیدگی کے حوالے سے انل چمڑیا نے کہا کہ جو طاقتیں پہلے دلتوں اور پسماندہ طبقات کو نشانہ بناتی تھیں، وہی اب اپنے سیاسی فائدے کے لیے مسلمانوں کو اپنا ہدف بناتی ہیں۔

بہار کی طرح اترپردیش میں بھی بی جے پی مخالف سیاسی اتحاد بننے یا بنائے جانے کے سوال پر انہوں نے کہا کہ مہاگٹھ بندھن یا عظیم اتحاد جیسا کچھ تو بنے گا ، لیکن وہ سماج وادی پارٹی کی سربراہی میں بنے گا یا بہوجن سماج پارٹی کی قیادت میں، یہ کہنا فی الحال مشکل ہے۔

سماجوادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی کے ایک ساتھ آنے کے سوال پر انل چمڑیا نے کہا کہ اس کا امکان فی الحال نہیں ہے کیونکہ دونوں کے درمیان اختلافات بہت گہرے ہیں اور متحد ہوکر انتخابی میدان میں اترنے کے لیے پہلے سے ہی زمینی سطح پر کافی کام کرنا پڑتا ہے جو دونوں پارٹیوں کو قریب لانے کی سمت میں نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ عوام اور خاص طور سے دلتوں، پسماندوں و اقلیتوں کا ایک بڑا طبقہ تو یہ چاہتا ہے کہ دونوں پارٹیاں متحدہوجائیں، لیکن ابھی اس کے امکانات کم ہیں۔ اسی کے ساتھ انہوں نے یہ کہا کہ جس طرح بہار میں ووٹروں نے سیاسی پارٹیوں کو ایک ساتھ آنے پر مجبور کردیا، ہوسکتا ہے اترپردیش میں بھی کچھ ویسا ہی دیکھنے کو ملے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *