گجرات میں میں بی جے پی خوفزدہ ہے :شیوانند تیواری

نامہ نگار 

پٹنہ

بی جے پی گجرات میں اتنی خوفزدہ کیوں ہے کہ اس کو مرکزی وزرا کی ایک پوری فوج کے علاوہ چار وزرائے اعلی اور ۱۲۲ اراکین پارلیمنٹ کو انتخابی مہم میں لگانے کی ضرورت پڑ گئی؟ گجرات اسمبلی الیکشن کے حوالے سے یہ سوال راشٹریہ جنتا دل کے قومی نائب صدر شیوانند تیواری نے اٹھایا ہے۔ انہوں نے یہاں ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایک اطلاع کے مطابق بی جے پی نے گجرات اسمبلی انتخابات میں مہم چلانے کے لیے ۲۳ مرکزی وزرا، چار وزرائے اعلی اور ۱۲۲ ارکان پارلیمنٹ کی ڈیوٹی لگائی ہے۔ الگ الگ نام کی درجنوں سماجی تنظیموں کو بھی انتخابی مہم میں لگایا جا رہا ہے۔ اس طرح کی بے نظیر اور غیر معمولی تیاری سے بی جے پی کے خوفزدہ ہونے کا ہی اظہار ہو رہا ہے۔ شیوانند تیواری نے کہا کہ گذشتہ ۲۲ برسوں سے گجرات میں بی جے پی کی حکومت ہے۔ مانا جاتا ہے کہ گجرات ہندتوا کی تجربہ گاہ ہے۔ وہاں کے چپے چپے پر ہندتوا وادی تنظیموں کا اثر ہے۔ اس کے باوجود انتخابی مہم کی ایسی تیاری تو بی جے پی کے کمزور ہوتے اعتماد کو ہی ظاہر کر رہا ہے۔ آر جے ڈی لیڈر نے کہا کہ در اصل وزیر اعظم نریندر مودی کی مقبولیت اب ڈھلان پر ہے۔ انہوں نے ملک کے عوام کو جو خواب دکھایا تھا ویسا ان کی زندگی میں کچھ ہوا نہیں۔ اس لیے ان کا اعتماد بہت کمزور ہوا ہے۔ گجرات کا الیکشن تو ایک ریاست کا الیکشن ہے۔ اس لیے وہاں تو اتنے وسائل جھونک پا رہے ہیں۔ لیکن اگلے لوک سبھا انتخابات میں یہ ممکن نہیں ہوگا۔ ادھر ہوئے عام انتخابات اور طلبہ تنظیموں کے انتخابی نتائج بتا رہے ہیں کہ اگلا الیکشن وزیر اعظم نریندر مودی کے لیے آخری ثابت ہو سکتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *