سماجی و اصلاحی کتاب ’’شمعِ فروزاں ‘‘کی رونمائی

book release function in Mumbaiممبئی، (پریس ریلیز)
مصنفہ محترمہ فیروزہ تسبی ( بنت لالہ میاں) جن کے کئی سالوں سے سماجی و اصلاحی مضامین مختلف اردو اخبارات میں شائع ہوتے رہے ہیں ۔ محترمہ فیروزہ تسبی کی سماجی و اصلاحی مضامین پر مشتمل کتاب ’’ شمعِ فروزاں ‘‘ کی رونمائی گذشتہ دنوں انجمن اسلام کریمی لائبریری ہال میں ہوئی۔ اس تقریب کی صدارت ظہیر قاضی نے کی۔رسم اجرا کی اس تقریب میں بڑی تعداد میں شائقین علم وادب شریک ہوئے۔ رسم اجرا ء کی ابتداء۸؍ سالہ بچی حمیرہ مشرف کی تلاوت کلام پاک سے ہوئی ۔
پروفیسر اعجاز راوت نے کتاب کے متعلق اپنے خیالات پیش کیے۔’’شمعِ فروزاں ‘‘ کتا ب کی رونمائی مشتاق انتولے کے ہاتھوں سے ہوئی ۔مالیگاؤں سے تشریف لائے اعزازی مہمان ادیب و شاعر،ایڈیٹر،افسانہ نگار طاہر انجم صدیقی نے کتاب کے متعلق اپنے خیالات پیش کیے۔کتاب کی تقریض اقبال کو ارے نیپیش کی۔ اردو ساہتیہ اکادمی کے سابق چیئرمین خورشید احمد صدیقی نے محترمہ فیروزہ تسبی اور ان کے خاوند فدا حسین تسبی کااستقبال کیا۔موصوف نے اپنے خیالات پیش کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ ایک بہترین سماجی اصلاحی کتاب ہے جسے ہر گھر میں رہنا ضروری ہے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان کے تمام مضامین سے متاثر ہو کر ہی ہم نے ۲۰۱۰ء کے ہارون رشید علیگ ایورڈ کے لیے ان کو منتخب کیا اور پھر ان کا ساہتیہ اکادمی کے راجیہ ایوارڈ کے لیے بھی انتخاب کیا۔بعد ازاں مشتاق انتولے نے کتاب کے متعلق سامعین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس کا ہر مضمون ایک درس ہے۔ آخر میں محترمہ فیروزہ تسبی نے اپنے بتایا کیا کہ وہ کس طرح اس مقام تک پہنچی ہیں جہاں وہ آج کھڑی ہیں ۔انہوں نے مزید بتایا کہ ان کی بے ساختہ فطرت نے ہی ان میں برائی کے خلاف لکھنے کا جذبہ پیدا کیا۔کسی بھی برائی کو ختم کرنے کے لیے دینی و اسلامی اخلاقی تعلیم ضروری ہے۔آخر میں آئے ہوئے تمام مہمانان و سامعین کا شکریہ ادا کیاگیا۔

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *