تبلیغی جماعت کا قصور کیا ہے؟

معصوم مرادآبادی ترقی یافتہ ملکوں میں زبردست تباہی مچانے اور ہزاروں انسانوں کی جان لینے والاانتہائی…

زعفرانی سیاست

پروفیسر محمد سجاد قسط 3 اردو قارئین کے لئے، اس تیسری قسط میں، ہم آج گورکھ پور کی بات کرین گے۔ بہ وجوہ دانشوروں اور صحافیوں میں گورکھ پور کی سیاست کے تئیں دلچسپی بڑھی ہے۔ اکچھے مکل نے 2015 میں ایک عمدہ کتاب شائع کی، گیتا پریس اینڈ دی میکنگ آف ہندو انڈیا۔ اس کتاب اور اس موضوع پر بھی بات کی جائے گی۔ فی الوقت ہمارا سروکار ہندو یووا واہینی سے ہوگا۔ دھیریندر کمار جھا نے 2017 میں ایک کتاب شائع کی، شیڈو آرمیز: فرنج آرگینائیزیشنس اینڈ فٹ سولڈرس آف ہندوتو۔ اس میں ایک مختصر باب ہے ہندو یوا واہینی پر۔ ششانک چترویدی، ڈیوڈ گلنر اور سنجے کمار پانڈے نے ایک تحقیقی مضمون (2019) شائع کیا ہے جس میں گورکھ پور کی سیاست ، 1920 تا حال، کا بالتفصیل جائزہ لیا گیا ہے۔ گورکھ پور سے لگے ہوئے بہار کے اضلاع، سیوان، گوپال گنج اور شاہ آباد (بھوج پور) کے علاقوں میں راجپوت آبادی والی بستیوں میں، واہینی کا اثر بڑھنے لگا ہے۔ کرنی سینا کے نام سے بھی بہار کے دور افتادہ بستیوں تک میں فلم ، پدماوت (2018)، کے تعلق سے مسلم مخالف باتیں مقبول کرائ گئیں، اور 13-14ویں صدی کے سلطان علاؤالدین خلجی کے عہد کی غیر مصدق اور مفروضہ سیاسی باتوں کے لئے آج کے مسلمانوں کو ذمہ دار ٹھہرانے والی سیاست کے ذریعہ ، مسلم مخالف ماحول بنا کر ، ہندوتو کی سیاست کو تقویت پہنچانے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ ایسا سمجھا جانا چاہئے کہ بہار اسمبلی کے آئندہ انتخابات میں بھی ان زعفرانی کاوشوں سے استفادہ کرنے کی کوشش کی جائیگی۔ اس تعلق سے واہینی اور گورکھ پور کی سیاست کے تئیں مذکورہ تحقیقات کا خلاصہ اردو قارئین کی خدمت میں پیش ہے۔ یوں تو بودھ، جین اور سنت کبیر تحریک کی آماجگاہ بھی اسی خطے میں ہے، اور فروری 1922 میں چوری چورا ہنسا کی وجہ کر گورکھ پور نے تحریک آزادی میں خاص مقام بنالیا۔ آزادی کے بعد سماجواد ی تحریک کا اثر بھی خاصہ رہا۔ گورکھ ناتھ مندر اور مٹھ کی بھی ایک مخصوص تاریخ رہی ہے، جو وقت کے ساتھ بہت بڑی “تبدیلی کا شکار” ہو گئی۔ ایسا کہا جاتا ہے کہ اودھ نواب  آصف الدولہ (1775-1797) نے بابا روشن علی شاہ اور ان کے دوست بابا گورکھ ناتھ کو گورکھ پور کا علاقہ نصف نصف حصے میں عطا کر دیا تھا۔ ٹھا کر اجے موہن سنگھ بشت عرف مہنت یوگی آدتیہ ناتھ نے 1998 کے لوک سبھا الیکشن میں 26ہزار ووٹوں سے اپنے مخالف کو شکست دیا، 1999 میں محض سات ہزار ووٹوں سے اپنے مخالف کو شکست دے پائے۔ حالاں کہ الیکشن سے عین قبل ، فروری 1999 میں ہی ، انہوں نے پولرائیزیشن کی سیاست کو تیز کر دیا تھا۔ پچ رکھیا، (مہاراج گنج ضلع، اتر پردیش) میں ایک خوں ریز ٹکراؤ ہو گیا تھا جس میں سماج وادی پارٹی کی طلعت عزیز کے محافظ ستیہ پرکاش یادو کا قتل ہو گیا تھا۔ اس کے باوجود یوگی تک قانون کے لمبے ہاتھ پہنچنے سے قاصر رہے- ملائم سنگھ کی سرکار (2002-2007) کے دوران، یوگی تک ، قانون کے لمبے ہاتھ کی کوئ رسائ نہ ہو سکی ۔ (جب 2007 کا اسمبلی الیکشن قریب آیا، تو جنوری 2007 میں ، یوگی کی گرفتاری ہوئ، اور گیارہ دنوں تک وہ حراست میں رہے، اور اس کے بعد لوک سبھا میں اپنا درد آنسوؤں میں بیان کیا۔ تنازعہ محرم کے تعزیہ کے جلوس کو لے کر تھا- ان معاملات پر ایک اردو صحافی، پرویز پرواز، بہادری کے ساتھ، مقدمے لڑ رہے ہیں۔ اب ساٹھ برس سے زیادہ عمر، اور علالت کے باوجود ان کا حوصلہ پست نہیں ہوا ہے۔ ) اس کے بعد کے اتر پردیش کے اسمبلی الیکشن 2002 میں زعفرانی پارٹی کی ہار ہو گئی تھی، گرچہ، گورکھ پور لوک سبھا کے پانچ میں سے ایک اسمبلی حلقے سے یوگی کے امیدوار رادھا موہن اگروال نے جیت درج کرا لی تھی۔ لیکن اس پر یوگی خود اپنے لئے مطمئن نہیں ہو سکتے تھے۔ لہذا مارچ 2002 میں انہوں نے اپنی ایک تنظیم بنائ جس میں انہون نے گو رکچھا منچ کو ہندو یوا واہینی کا نام دے دیا۔ فروری 2002 میں گجرات فساد کے تحت ملک میں ایک فرقہ وارانہ کشیدگی کا ماحول یوں بھی بنا ہوا تھا۔ اس تنظیم کے قیام کے بعد ہی ، گورکھپور اور پڑوس کے اضلاع میں، ایک برس کے اندر، کم از کم، چھ فسادات ہوئے۔ اور 2007 تک فسادات کی تعداد 22 تک پہنچ گئی۔…

زعفرانی سیاست، علاقائی غنڈے و دلال اور فسادات : دوسری قسط

پروفیسر محمد سجاد دوسری قسط اس دوسری قسط میں، گجرات میں، زعفرانی سیاست کے عروج کو…

زعفرانی سیاست، علاقائی غنڈے و دلال اور فسادات

زعفرانی سیاست، علاقائی غنڈے و دلال اور فسادات: گجرات سے دہلی، بہار اور اتر پردیش و…

اُٹھ مِری جان مِرے ساتھ ہی چَلنا ہے تجھے

صرف بیٹی بچاﺅ، بیٹی پڑھاﺅ کا نعرہ دینے سے خواتین کے مسائل حل نہیں ہو سکتے…

دارا شکوہ بادشاہ کیوں نہیں بن سکا؟

دارا شکوہ: ایک محقق اور بدنصیب شہزادہ پروفیسر سپریا گاندھی کی تازہ تصنیف کا سرسری جائزہ…

قرآن کی آواز” کو خراج عقیدت”

(محمد صدیق المنشاوی کے 100 ویں یوم پیدائش پر خصوصی مضمون) ایم ودود ساجد بیس جنوری…

مہار اشٹر میں بی جے پی کو کس نے ہرایا؟

فیصل فاروق مہاراشٹر میں راتوں رات دیویندر فرنویس کی حلف برداری اور ڈرامائی انداز میں حکومت…

अपराध अपराध होता है उसका जाति धर्म नहीं होता

वजीह अहमद तसौवुर के कलम से ✍️ हैदराबाद की दिल दहला देने वाली घटना पुरे देश…

چنے کا حلوہ

ذیشان دوستو، آپ نے چنے کا حلوہ ضرور کھایا ہوگا۔ اگر آپ میں سے کسی نے…