زندگی نے کھلونا بنا دیا

نئی دہلی، ۹؍نومبر: ملک میں مہنگائی اور بے روزگاری نے عام لوگوں کا جینا اتنا مشکل کردیا ہے کہ انہیں ایک دو دن کی بھی فرصت نہیں ملتی۔ گوا کے واسکو ڈی گاما گاؤں کے رہنے والے عبدالمنصور کی بھی یہی کہانی ہے۔ اپنے آبائی وطن میں کھلونے کا اسٹال لگاکر گھر بار چلانے والے عبدالمنصور جب

(دہلی کی جامع مسجد کے نزدیک غبارہ بیچتے ہوئے عبدالمنصور، تصویر: اوصاف ضیاء)
(دہلی کی جامع مسجد کے نزدیک غبارہ بیچتے ہوئے عبدالمنصور، تصویر: اوصاف ضیاء)

اپنے ایک دوست سے ملنے دہلی آئے تو انہیں یہاں بھی کام کرنا پڑگیا۔ ان کا کہنا ہے کہ دوست سے ملنے کی چاہت اپنی جگہ لیکن اگر ایک دو دن بھی کمائی نہیں کریں گے تو گھر چلانا مشکل ہوجائے گا۔ اس لیے انہوں نے پرانی دہلی کے جامع مسجد علاقے میں غبارے بیچنا شروع کردیا۔

عبدالمنصور کہتے ہیں کہ غبارے بیچنے سے انہیں روزانہ پانچ سات سو کی آمدنی تو ہوجاتی ہے ، مگر اپنے گھر سے دور رہنے والوں کے لیے یہ آمدنی ناکافی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ ان کا پورا خاندان واسکو ڈی گاما میں رہتا ہے اس لیے دیوالی کے فوراً بعد وہ اپنے وطن لوٹ جائیں گے۔ دہلی میں رہ کر اپنے کام کو بڑھانے کے سوال پر انہوں نے کہا کہ مہنگائی روزبروز بڑھتی جارہی ہے ۔ گھر سے دور رہنے پر خرچ میں اضافہ ہوگا اوران کی اتنی بچت نہیں ہے کہ کچھ دن کم کمائی سے بھی کام چل جائے گا۔ انہیں روزانہ کا خرچ نکالنے کے لیے ہر روز کام کرنا پڑتا ہے۔ اسی لیے جہاں بھی جاتے ہیں، اپنا گھر بار چلانے کے لیے کوئی نہ کوئی کام ضرور کرتے ہیں۔ یہی ہماری زندگی ہے اور شاید زیادہ تر لوگ ان دنوں اسی طرح زندگی بسر کررہے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *