شراب بندی پر ‘دیوتا’ نتیش سے پوچھا گیا بڑا سوال

پٹنہ، (نامہ نگار):
شراب بندی قانون کے تحت اب تک ایک بھی افسر کے پکڑے نہیں جانے کا سوال اٹھاتے ہوئے پٹنہ کے راکیش کمار نامی شخص نے وزیر اعلیٰ نتیش کمار سے کہا کہ وہ اس کی جانچ کروائیں۔ لوک سنواد کے دوران یہاں سکریٹریٹ میں راکیش نے نتیش کمار سے کہا: شراب بندی قانون لاگو کرنے کے بعد آپ دیوتا ہوگئے ہیں۔ میرے یہاں ۷۵؍ افراد کام کرتے ہیں، ان میں سے چھ کی مائیں بھگوان سے پہلے آپ کی آرتی کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ شراب بندی قانون کے تحت ۲۲؍ ہزار افراد پکڑے گئے ہیں لیکن ان میں ایک بھی افسر نہیں ہیں۔ اس لیے آئی اے ایس آئی پی ایس افسروں کا بھی میڈیکل ٹسٹ ہونا چاہیے کہ وہ شراب پیتے ہیں یا نہیں۔ واضح ہو کہ ریاست میں تعینات سبھی افسران نے شراب نہیں پینے کا حلف لیا ہے۔
وزیر اعلیٰ کے سکریٹریٹ میں واقع ’سنواد سیل’ میں سوموار کو ’لوک سنواد‘ پروگرام ہوا۔ اس میں انتظامیہ، پولیس، داخلی امور، پنچایتی راج، کوآپریٹیو، شہری ترقیات و رہائش، محصولات اور اصلاحات آراضی اور ٹرانسپورٹ محکموں سے متعلق ۱۵؍ افراد نے اپنے اپنے مشورے دیے۔
اس میں پٹنہ کے راکیش کمار شرما، انیمیش رنجن، املیش کمار چوہان، پربھاش چندر شرما، منوج کمار، سریش کمار شرما، دربھنگہ کے محمد رضوان، خورشید عالم، مدھوبنی کے سشیل کمار، سمستی پور کے شمبھو شرن، بیگوسرائے کے شوویندو کمار بھاگلپور کے دیپک کمار جھا، کشن گنج کے راکیش کمار، ارریہ کے آشیش کماراور اورنگ آباد کے دنیش پرساد سنگھ نے وزیر اعلیٰ کو اپنے اپنے مشورے دیے۔ وزیر اعلیٰ نے متعلقہ محکموں کے چیف سکریٹری کو دیے گئے مشوروں اور تجاویز پر کارروائی کرنے کے لیے کہا۔
وزیر اعلیٰ نے دربھنگہ کے خورشید عالم کی اس تجویز کو اچھی بتایا جس میں انہوں نے کہا کہ زمین کے استعمال کے حساب سے اس کا لگان وصول کیا جائے۔ نتیش کمار نے کہا کہ لوگ زمین کا تجارتی استعمال کرتے ہیں، لیکن لگان صرف زمین کا دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کاروبار کے مطابق لگان طے کرنے کا یہ مشورہ اچھا ہے۔ انہوں نے متعلقہ محکمہ کو قانونی پہلو کو دیکھتے ہوئے مناسب ضابطہ بنانے کی ہدایت دی۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح کا لگان آئے گا، اسی کے مطابق زمین کی قیمت طے کی جائے گی۔
لوک سنواد میں پٹنہ میں ٹریفک کی حالت سدھارنے کے لیے بھی مشورے آئے۔ اس کے لیے یہاں کے انیمیش رنجن نے موٹر سائیکل پر ٹریفک پولیس کی گشت بڑھانے کا مشورہ دیا اور کہا کہ جہاں جام ہو وہاں فوری کارروائی کرکے پولیس دوسری جگہ جا سکتی ہے۔ اس مشورہ کو بھی پسند کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *