عام بجٹ 2016-17 کے اہم نکات

وزیر خزانہ ارون جیٹلی پارلیمنٹ جاتے ہوئے
وزیر خزانہ ارون جیٹلی پارلیمنٹ جاتے ہوئے

حکومت، اپنے ترقی کے ایجنڈے پر بغیر کسی سمجھوتے کے مالی استحکام کیلئے پُرعزم، مالی سال 2017 کیلئے مالی خسارے کو 3.5 فیصد تک لانے کا ہدف۔
گزشتہ برس کے مقابلے میں تقریباً دو گنا رقم زراعت، کاشتکاروں کی بہبود اور آبپاشی کیلئے 47912 کروڑ روپے مقرر کئے۔
نئی حفظان صحت اسکیم کے تحت ہر کنبے کیلئے ایک لاکھ روپے تک کے علاوہ بزرگ شہریوں کے لئےاضافی 30 ہزار روپے فراہم کئے جانے کا منصوبہ۔
17-2016 میں 1.5 کروڑ خط افلاس سے نیچے گزربسر کرنے والے خاندانوں کی خاتون ممبروں کو مفت ایل پی جی کنکشن فراہم کرائے جائیں گے اور دو برسوں میں کل 5 کروڑ گھروں کا احاطہ کیا جائے گا۔
سرکاری بنیادی ڈھانچے کےلئے بہت بڑا 2.21 لاکھ کروڑ روپے مختص کئے جانے کا اعلان، گزشتہ برس کے مقابلے میں 22.5 فیصد کا اضافہ۔
اعلیٰ تعلیم کے لئے مالی اتھارٹی کا قیام-اعلیٰ تعلیم کو فروغ دینے کے لئے ابتدائی بنیادی سرمایہ 1000 کروڑ روپے-مزید یہ کہ 10 سرکاری اور 10 پرائیویٹ اداروں کو عالمی درجے کے تدریسی اور تحقیقی ادارے بنانے کا منصوبہ۔
ٹیکس دوست یا ٹیکس موافق ماحول کو بڑھاوا اور تنازعے کو حل کرنے کی اسکیم ، جن میں بہت کم یا زیرو جرمانہ ہو، کے ذریعہ مقدموں کے سبب ہونے والی پریشانیوں کو کم سے کم کرنا۔ جاری ٹیکس مقدمات کو حل کرنےمیں آسانی۔
درمیانہ درجے کے ٹیکس دہندگان کو راحت، سیکشن 87-اے کے تحت 5 لاکھ سے کم آمدنی والے افراد کو 5000روپے کی چھوٹ اور سیکشن 80 جی جی کے تحت کرائے کی حد میں 60000 روپے کی تخفیف۔
مستحق افراد کو آدھار پر مبنی، مالی اور دیگر سبسڈی کے راست فوائد مہیا کرائے جائیں گے اور ایک نیا قانون اور سماجی تحفظ پلیٹ فارم فروغ دیا جائے گا۔
ای پی ایف او میں اندراج کرنے والے تمام نئے ملازمین کی طرف سے ان کے روزگار کے پہلے تین برسوں کے لئے 8.33 فیصد تعاون کی خاطر 1000 کروڑ روپے فراہم کر کے منظم سیکٹر میں روزگار میں تیزی لانا۔
کارپوریٹ ٹیکس کے تحت استثنیٰ کو ختم کرنے کے لئے آسان اور مارکیٹ حامی ٹیکس اقدمات کئے جائیں گے۔
وزیراعظم کی مدرایوجنا کے تحت 1.8 لاکھ کروڑ روپے قرض دیا جائے گا، جس میں نئی شروع ہونے والی کمپنیوں کے 5 سال کے منافع میں سے 3 سال کے منافع پر 100 فیصد ٹیکس معاف کیا جائے گا۔
چھوٹے پروجیکٹوں سے منافع پر ٹیکس میں 100 فیصد چھوٹ کے ذریعہ قابل استطاعت مکان۔
ایک نئی ونڈو کے ذریعہ 45 فیصد ٹیکس ادائیگی کے ذریعہ کالے دھن میں کمی اور پوشیدہ سرمائے کے اعلان کی اسکیم۔

سرکاری شعبے کے بینکوں (پی ایس بی) میں دوبارہ سرمایہ کاری کی جانب 25000 کروڑ روپے مختص کر کے مالی شعبے کا استحکام، سرکاری جنرل کمپنیوں کی فہرست بنانا اور پی ایس بی کے استحکام کےلئے لائحہ عمل تیار کرنا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *