پاکستان میں ہندوؤں کی آبادی میں اضافہ : عبدالباسط

Pakistan High Commissioner Abdul Basitنئی دہلی، (نامہ نگار): ہندوستان میں پاکستان کے سفیر عبدالباسط نے کہا ہے کہ ان کے ملک میں ہندوؤں کی آبادی میں کمی نہیں بلکہ اضافہ ہوا ہے۔ یہاں مسلم مجلس مشاورت کے صدر دفتر میں بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان کے معرض وجود میں آنے کے وقت ان کے ملک میں ہندو مجموعی آبادی کا کم وبیش ساڑھے ۲۳؍ فیصد حصہ تھے۔ لیکن ان میں سے تقریباً بائیس فیصد اس وقت کے مشرقی پاکستان یعنی موجودہ بنگلہ دیش میں آباد تھے۔

عبدالباسط نے کہا کہ ہندوؤں کی آبادی کے حوالے سے اکثر پاکستان پر الزام لگایا جاتا ہے کہ وہاں ان کی آبادی کم ہوئی ہے ، لیکن یہ بات سچ نہیں ہے ۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے کہا کہ پاکستان میں اقلیتوں کی آبادی مجموعی طور پر تقریباً تین فیصد ہے اور وہ نہ صرف محفوظ ہیں بلکہ زندگی کے مختلف شعبوں یہاں تک کہ وزارت خارجہ او ر مسلح افواج میں بھی نمایاں خدمات انجام دے رہے ہیں۔

واضح ہوکہ آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کے صدر نوید حامد نے پاکستان میں اقلیتوں کے حقوق کا مسئلہ اٹھاتے ہوئے کہا تھاکہ وہاں اقلیتی فرقوں کے ساتھ مساویانہ سلوک کرنے کے ساتھ ہی ان کی فلاح وبہبود کے لیے مناسب اقدامات کیا جانا چاہیے۔

نوید حامد نے پنجاب کے گورنر سلمان تاثیر کے قتل پر جہاں گہرے رنج اور دکھ کا اظہار کیا وہیں انہوں نے کہا کہ جس طرح سے اس سانحہ کے بعد پاکستان میں قانون نے اپنا کام کیا اور نہ صرف عدالت نے مجرم کو سزا دی بلکہ اس پر عمل آوری بھی ہوئی، وہ باعث اطمینان ہے۔ اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان میں قانون کی حکمرانی مضبوط ہورہی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *