امارت شرعیہ نے رویت ہلال کا فیصلہ پوری تحقیق سے کیا ہے ، لوگ غلط فہمی میں نہ پڑیں: ناظم امارت شرعیہ

پٹنہ…… ( نمائندہ)  ناظم امارت شرعیہ مولانا انیس الرحمن قاسمی نے اپنے ایک اخباری بیان میں کہا ہے کہ امارت شرعیہ بہار، اڈیشہ و جھارکھنڈ، خانقاہ مجیبیہ پھلواری شریف ، پٹنہ ، دار العلوم دیوبند،ندوۃ العلمائ لکھنؤ، تحقیقات شرعیہ، جمعیۃ علمائ ہند، گجرات چاند کمیٹی احمد آباد،صوبائی جمعیت اہل حدیث ممبئی، مرکزی چاند کمیٹی فرنگی محل لکھنؤ،مرکزی روئیت ہلال کمیٹی پوکھرن راجستھان،امارت اہل حدیث صادق پور، پٹنہ، جمعیۃ علمائ کرناٹک،روئیت ہلا ل کمیٹی پنجاب،دار القضائ امارت شرعیہ وجےواڑہ، آندھرا پردیش کے علاوہ رویت ہلال کے درجنوں معتبر اداروں کا فیصلہ یہ ہے کہ آج مورخہ ۱۷ مئی ۲۰۱۸ سے رمضان شروع ہو چکا ہے،اس کی وجہ یہ ہے کہ پورے ہندوستان کا مطلع ایک ہے، دوسرے ممالک کے مطالع کو بحث میں نہیں لایا گیا ہے ، عام طور پر عرب ممالک کے مطلع اور ہندوستان کے مطلع میں ایک دن کا فرق ہو جاتا ہے ، مگر ماہرین فلکیا ت اور علم ہئیت کے ماہرین کے نزدیک ضروری نہیں ہے کہ ہمیشہ ایک دن کا فرق لازمی ہو، بلکہ کبھی کبھی یہ فرق چند گھنٹوں کا بھی ہوتا ہے ، ایسی صورت میں دونوں جگہ تاریخ ایک ہی ہو سکتی ہے اور ایک ہی دن چاند نکل سکتا ہے ۔ اور اس مرتبہ ماہرین فلکیات کے اعتبار سے ایسا ہی ہوا ہے، شریعت میں رمضان المبارک کے چاند کا ثبوت ایک مسلمان شخص کی گواہی پر بھی ہو جا تا ہے، گواہی کے لیے تحریر ضروری نہیں ہے ، نہ گواہ کو قاضی کے پاس جانا لازم ہے ، قاضی کے نمائندے خود گواہ کے پاس جا کر بھی گواہی طلب کر سکتے ہیں اور اس گواہی کی بنیاد پر قاضی کا فیصلہ کرنا شرعی طور پر جائز و درست ہو تا ہے ، چنانچہ امار ت شرعیہ  کے نمائندہ جناب مولانا قمر انیس قاسمی صاحب رئیس المبلغین امارت شرعیہ جوابھی چنئی میں ہیں اور مولانا معصوم اقبال قاسمی تامبرم چنئی نے خود بھی چاند دیکھا اور قاضی شریعت امارت شرعیہ کے حکم سے وہاں کے ذمہ دار افراد اور جن لوگوں نے چاند دیکھا تھا ان سے ملاقات کر کے شہادت وصول کی اس کے علاوہ  انہوں نے قاضی شہر گورنمنٹ آف تمل ناڈو چنئی کے فیصلہ کی کاپی بھی دارا لقضائ امارت شرعیہ میں ارسال کی۔ساتھ ہ تمل ناڈو ، آندھرا پردیش، تینلگانہ اور کرناٹک کے مختلف اداروں نے رویت عامہ کی بنیاد پر شہادت وصول کر کے رویت کا اعلان کیا اور ان صوبوں میں رویت کی خبر اس درجہ عام ہو گئی کہ یہ خبر مستفیض کے درجہ میں ہو گئی ، اور خبر مستفیض کی صورت میں با ضابطہ شہادت کی ضرورت پیش نہیں آتی ہے۔ لہٰذا ان شواہد و ثبوت کی بنیاد پر مرکزی دار القضائ امارت شرعیہ پھلواری شریف پٹنہ نے انتہائی تحقیق کے بعد رویت کا فیصلہ کیا ہے ۔امارت شرعیہ کے ساتھ ساتھ مذکورہ بالا اداروںنے بھی اپنے طور پر رویت کی تحقیق ہوجانے کے بعد ہی رویت کا اعلان کیا ہے ۔اس لیے جو لوگ یہ غلط فہمی پھیلا رہے ہیں کہ ہمارے یہاں چاند نہیں ہوا ہے ، اس لیے ہم نہیں مانیں گے یہ صحیح نہیں ہے ، کیوں کہ اگر مطلع ایک ہے تو ایک جگہ بھی چاند دیکھا جائے گا تو دوسری جگہ اس کی بنیاد پر رویت ثابت مانی جائے گی۔چنئی کے مندرجہ ذیل علمائ کرام وذمہ دار حضرات نے اپنی آنکھوں سے چاند دیکھا اور عام رویت ہونے کی تصدیق کی ، دارالقضائ امارت شرعیہ کے نمائندوں نے بھی ان سے بات کر کے اور شہادت لے کر رویت کی تصدیق کی ہے، وہ علماءیہ ہیں ۔

مولانا عبد المجید باقوی مہتمم مدرسہ کاشف الہدیٰ پونہ ملی ، چنئی، مولانا عبد الکریم قاسمی اورمولانا یوسف کاشفی صاحب اساتذہ مدرسہ کاشف الہدیٰ پونہ ملی ، چنئی،مولانا منصور کاشفی امام و خطیب مکہ مسجد پونہ ملی چنئی، قاری الفت صاحب امام و خطیب ایر فورم مسجد تامبرم چنئی، جناب اسلم صاحب مؤذن مرکز والی جامع مسجد پلہ ورم چنئی، جناب الحاج تاج الدین رکن مرکز والی جامع مسجد پلہ ورم چنئی ،الحاج عبد الوہاب صاحب رکن مرکز والی جامع مسجد پلہ ورم چنئی، الحاج آصف صاحب پیری میڈ چنئی، مفتی مجاہد الاسلام قاسمی مہتمم جامعہ قاسمیہ دھوبی پیٹ، چنئی،جناب الحاج سلطان حیات صاحب محلہ پیری میڈ چنئی، جناب مولانا عمر فاروق صاحب جمعیۃ علمائ آندھرا پردیش کڈپہ، آندھرا پردیش، جناب فرحان صاحب بنگلور، ان حضرات کے ساتھ سیکڑوں افراد نے چاند دیکھا ہے۔

ان تمام حضرات کے رابطہ نمبرات دار القضائ امارت شرعیہ میں موجود ہیں ، جن لوگوں کومزید تحقیق کرنی ہو وہ رابطہ کر سکتے ہیں ۔ناظم صاحب نے مزید کہا کہ آج ساری دنیا میں ایک ساتھ رمضان کے روزے شروع ہوئے ہیں، جو امت مسلمہ کے اتحاد کے لیے ایک مبارک موقع ہے ، اللہ تعالیٰ رمضان کی برکتوں سے ہم سب کو نوازے۔

Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *