غیرمنصفانہ گرفتاریوں کا سلسلہ ختم ہو: مولانا عمری

jamat-e-islami
نئی دہلی، ۲۵؍ جنوری(پریس ریلیز)
گذشتہ چند دنوں سے دہشت گردی بالخصوص دہشت گرد تنظیم آئی ایس آئی ایس کے نام پر کی جا رہی مسلم نوجوانوں کی گرفتاریا ں جاری ہیں۔ اس صورتحال پر امیر جماعت اسلامی ہند مولانا سید جلال الدین عمری نے شدیدتشویش اور ناگواری کا اظہار کیا ہے۔ مولانا عمری نے کہا کہ ماضی میں بھی بہت سے مسلم نوجوانوں کی دہشت گردی کے نام پر گرفتاریاں ہوتی رہی ہیں، لیکن عدالتوں نے ان میں سے بیشتر پر لگائے گئے الزامات کو رد کرکے انہیں تمام معاملوں سے بری کر دیا تھا۔
مولانا عمری نے مزید کہا کہ گذشتہ ایک سال کے دوران دہشت گردی کے نام پر مسلمانوں کی گرفتاری میں کسی قدر کمی آئی تھی اور ایسا لگتا تھا کہ حکومت بلا وجہ گرفتاری کے معاملہ میں سنجیدہ ہے۔ وزیر اعظم اور وزیر داخلہ نے بھی کئی بار یہ بات واضح طور پرکہی تھی کہ ہمیں یقین ہے کہ ہندوستا نی مسلمان آئی ایس آئی ایس اور القا عدہ کے جال میں نہیں پھنسیں گے۔ مولانا نے کہا کہ اس سب کے باوجود محسوس ہوتا ہے کہ حکومت نے کسی خاص پالیسی کی وجہ سے یا مسلم مخالف بیرونی قوتوں کے غیر منصفانہ اور سفا کانہ طرز عمل کی تقلید کرتے ہوئے مسلم نوجوانوں کی گرفتاریوں کا نیا سلسلہ شروع کیا ہے اور اس کو اس کااحساس نہیں ہو رہا ہے کہ ملک و بیرون ملک میں اس کی تصویر کتنی خراب ہوگی اور ہندستان کی ساکھ کتنی مجروح ہوگی ۔
مولانا عمری نے کہا کہ ان نئی گرفتاریوں سے مسلم سماج میں خوف و ہراس کاماحول پید ا کرنے اور اعلیٰ تعلیم یافتہ مسلم نوجوانوں کا کیریئر تباہ کرنے کی سازش کی جا رہی ہے، جو تشویش کا باعث ہے۔
امیر جماعت اسلامی ہند نے حکومت سے مطالبہ کیاکہ گرفتار شدہ بے قصور افراد کو فوراً رہا کیا جائے ورنہ ان کے مقدمات پر جلد کارروائی عمل میں لائی جائے تاکہ حقوق انسانی کی پامالی ختم ہو، دستوری تقاضے پورے ہوں اور جن کے خلاف کارروائیاں ہو رہی ہیں انہیں انصاف مل سکے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *