جے این یو معاملہ میں وزیرداخلہ کا پتلا نذر آتش

Nazia Elahi Khan burns Home minister's effigy
کولکاتا، (پریس ریلیز):
تعلیمی اداروں کو زعفرانی سیاست کا اکھاڑہ بنانے اور معصوم طلبا کے کیریئر سے کھلواڑکے خلاف فورم فارآرٹی آئی ایکٹ اینڈ اینٹی کرپشن کی سربراہ معروف سماجی کارکن ایڈوکیٹ نازیہ الہیٰ خان نے آج کولکاتا کے مولاعلی کراسنگ پر مرکزی وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ کا پتلا نذرآتش کیا۔ فورم کے کارکنوں کے علاوہ بڑی تعداد میں عوام نے بھی اس احتجاج میں حصہ لیا۔
وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ اور بی جے پی کے خلاف نعروں کی گونج میں نازیہ الہیٰ خان نے کہا کہ طلبا کے کیریئر سے کھلواڑ کرنے اور ان کے حق کی آواز دبانے کی ہر کوشش کے خلاف وہ اپنی ٹیم کے ساتھ وقت کے فرعون کے سامنے سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی طرح کھڑی رہیں گی۔ انہوں نے کہا کہ مرکزی کابینہ میں غیرتعلیم یافتہ لوگوں کی اکثریت ہے جو کبھی مدراس یونیورسٹی کو نشانہ بناتے ہیں تو کبھی حیدرآباد یونیورسٹی میں روہیت ویمولا کو قتل کرتے ہیں اور کبھی جے این یو کے کنہیا کو غدار کہتے ہیں۔ جے این یومیں ہوئی پولیس کارروائی ایمرجنسی سے بھی بدتر تھی۔

انہوں نے الزام لگایا کہ ہر جگہ آر ایس ایس کے نظریات کو لاگو کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے اور تعلیمی اداروں پر حملے کئے جا رہے ہیں ملک کے مختلف حصوں میں طلبا کو نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ طاقت کے گھمنڈ میں مرکزی حکومت سیکولرازم اور جمہوریت کے خلاف کام کررہی ہے اور حق کی آواز اٹھانے والوں کو غدار قرار دے رہی ہے۔ ایک طرح سے ملک میں غیراعلانیہ ایمرجنسی لگا دی گئی ہے لیکن اس ماحول کو برداشت نہیں کیا جاسکتا۔ تعلیمی اداروں کی خودمختاری کو متاثر کرکے، طلبہ، خواتین،صحافیوں،اقلیتوں اورکمزوروں کی آوازدباکرخوف کاماحول پیدا کرکے سنگھی نظام نافذ کرنے کی کوشش ہورہی ہے۔ جمہوریت اور دستور کو بچانے کے لیے ملک کے سیکولرازم کے تحفظ کی مضبوط آواز تعلیمی اداروں سے اٹھی ہے۔ ڈکٹیٹرشپ کے خلاف متحد ہوکر سیکولرازم کی حفاظت کی ذمہ داری ہرشخص محسوس کررہا ہے اور نازیہ الہیٰ خان اپنے فورم کی ٹیم کے ساتھ اس ڈکٹیٹرشپ کے خلاف ہمیشہ آگے رہیں گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *