کنھیا کے اے ایم یو دورہ سے ایک نئی تحریک شروع ہوگی: راشد نسیم

11 march

نئی دہلی،۱۱ مارچ(پریس ریلیز): جواہر لعل نہرو یونیورسٹی اسٹوڈنٹ یونین کے صدر کنھیا کمار کے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کا دورہ کرنے کی خبریں موصول ہو رہی ہیں۔ کنھیا نے گزشتہ دنوں آئندہ اسمبلی انتخابات میں کسی بھی سیاسی پارٹی کے لیے پرچار کرنے سے منع کردیا تھا، تاہم طلبہ کے لیے آگے کی لڑائی جاری رکھنے کا انھوں نے اعادہ کیا ہے۔

آج مائنارٹی میڈیا سینٹر کے خاص پروگرام اردو اخبارات کا جائزہ میں دہلی پردیش لوک جن شکتی پارٹی کے ترجمان محمد راشد نسیم نے کہا کہ کنھیا کمار اگر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کا دورہ کرتے ہیں تو طلبہ کی آواز کو ایک نیا حوصلہ اور جذبہ ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ جس طرح سے مہاتما گاندھی نے ایک تحریک علی گڑھ سے شروع کی تھی، اسی طرح سے کنھیا کے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے دورہ سے ایک نئی تحریک کا آغاز ہوگا۔ انھوں نے مزید کہا کہ یہ بھی کہا جا رہاہے کہ یہ دورہ فرقہ پرستی کو روکنے اورسیکولرزم کا پیغام دینے کی غرض سے کیا جا رہا ہے۔ راشد نسیم نے کہا کہ اگر تاریخ کا مطالعہ کریں تو ہمیں دیکھنے کو ملے گا کہ جب بھی طلبہ اور ملک کے نوجوانوں نے ایک ہو کر کسی تحریک کا آغاز کیا ہے تو اس کے مثبت نتیجے سامنے آئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کنھیا کمار نے جے این یو سے جو فرقہ پرستی، سنگھواد اور منوواد کے خلاف آواز بلند کی ہے، وہ اب پورے ہندوستان میں گونجے گی۔ راشد نسیم نے اس شک کا اظہار بھی کیا کہ ہو سکتا ہے کہ حکومت کی جانب سے کنھیا کے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی دورہ پر روک بھی لگا دی جائے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *