اقوام متحدہ شام امن قائم کرے: محمود مدنی

نئی دہلی:

محمود مدنی
محمود مدنی

جمعیۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی نے اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل انتونیو گیوٹیریزکو خط لکھ کر شام میں رونما ہونے والے انسانی المیہ پر گہری تشویش اور تکلیف کا اظہار کیا ہے۔ مولانا مدنی نے مکتوب میں کہا ہے کہ جمعیۃ علماء ہند، یواین کے ذریعے وہاں امن کے قیام میں بے بسی پر مایوس ہے۔ دنیا بھر میں تمام طبقات کے درمیان یہ عام تاثر ہے کہ عالمی برادری حقوق انسانی کے تئیں اپنے فرائض کی ادائیگی میں مکمل طور سے ناکام ہوتی نظر آرہی ہے۔ اس لیے جمعیۃ یہ اپنا فرض سمجھتی ہے کہ یو این کے تمام ممبران تک اپنا احساس اور اپنی بات پہنچائے او رانہیں عملی اقدام پر آمادہ کرے۔
مکتوب میں یو این سکریٹری جنرل کی اس جانب توجہ دلائی گئی ہے کہ وہ تاریخی شہر حلب میں انسانی بحران کے حل کے لیے فوری اقدام کریں اور اس کی تباہی کو روکے۔ مولانا مدنی نے اپنے مکتوب میں جمعیۃ علماء ہند کے تینتیسویں اجلاس عام میں شام سے متعلق منظور کردہ تجویز کو بھی منسلک کیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ’’جمعیۃ علماء ہند یہ محسوس کرتی ہے کہ شام کی حکومت عوام کی ناراضگی کو دور کرنے کے بجائے اسے دبانے کی کوشش کرتی رہی ہے۔ اس نے اپنے عوام کے ساتھ جو معاندانہ اور ظالمانہ سلوک کیا ہے، وہ قابل مذمت عمل ہے۔ شام میں بین الاقوامی طاقتوں اور مختلف جہتوں سے جنگ و جدال نے ایسی صورت حال پیدا کردی ہے کہ جس کے درد کو بیان کرنے کے لیے موزوں الفاظ نہیں ہیں۔ شام میں لاکھوں انسان ماردیے گئے اور لاکھوں بے گھر ہوگئے ہیں۔
جمعیۃ علماء ہند متعلقہ فریقوں اور خاص طور سے بشار الاسد کی حکومت سے دردمندانہ اپیل کرتی ہے کہ وہ بین الاقوامی انسانی حقوق کے تحت اپنی ذمہ داریوں کو سمجھے اور اپنے ہی شہریوں پر خطرناک قسم کے ہتھیار اور بموں کا استعمال بند کرے۔ نیز روس اور شام کی طاقتیں فوری طور سے حلب کی ناکہ بندی اور شہر پر حملے بند کریں اور لاکھوں پھنسے ہوئے افراد کی راحت رسانی اور بازآبادکاری میں حصہ لیں۔
جمعیۃ علماء ہند عالمی برادری سے یہ اپیل کرتی ہے کہ شام کے پناہ گزینوں کے ساتھ اچھا معاملہ کیا جائے اور خانماں برباد انسانوں کو بنیادی انسانی ضروریات فراہم کیا جائے۔ جمعیۃ علماء ہند یوروپی ممالک کی انسانی ہمدردی کو تحسین کی نگاہ سے دیکھتی ہے جنہوں نے شام کے لاکھوں شہریوں کو ٹھکانہ دے رکھا ہے، تاہم فرانس سے مطالبہ ہے کہ ان غریبوں کو سرچ کے نام پر پریشان نہ کرے۔‘‘

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *