میتھلا یونیورسٹی وائس چانسلر مست، ٹیچر کارکن پست : نیاز احمد

دربھنگہ – 12 مئی، 2018 – (پریس ریلیز)
دیو نارائن یادو کالج، مدھوبنی یونٹ کے سات اہلکاروں کی طرف سے کئی دنوں سے جاری بھوک ہڑتال کی حمایت کرنے پہنچے انصاف منچ  کے ریاستی نائب صدر نياز احمد نے کہا کہ کئی دنوں سے ٹیچر  اہلکار ہڑتال پر ہیں اور متھلا یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے کان پر جوں تک نہیں رینگ رہا  ہے. بڑی تعداد میں  ٹیچر  اہلکار اپنی چھ نکاتی  مانگ کو لے کر بھوک ہڑتال پر کئی دنوں سے  بیٹھے ہوئے ہیں لیکن نہ تو وائس چانسلر ان کی خبر  لیتے نظر آ رہے ہیں اور نہ ہی یونیورسٹی کے دوسرے دیگر عہدیدار. جناب احمد نے صاف طور پر کہا کہ پروفیسر  ساکیت کشواہا کے جانے کے بعد سے موجودہ  وائس چانسلر نے یونیورسٹی میں  اصول و ضوابط کی دھجياں اڑا کر رکھ دیا ہے اور رشوت کا بازار مکمل طور پر عروج پر ہے. موجودہ  وائس چانسلر کے سرپرستی  میں یونیورسٹی میں لوٹ کا بازار  کھلے عام چل رہا ہے. کسی بھی منصوبہ کے لئے نہ تو  کوئی ٹینڈر  لیا جارہا ہے اور نہ ہی  اصول کے مطابق  یونیورسٹی کا کوئی  کام  کیا جا رہا ہے. سارے قاعدے  قانون کو موجودہ  وائس چانسلر نے طاق پر رکھ مال غنیمت کے مارکیٹ کو فروغ دے کر اپنی دكانداري چلاتے دیکھے جا رہے ہیں. کئی دنوں سے ٹیچر  اہلکار اپنی  مانگ کو لے کر بھوک ہڑتال پر ہیں  اور یونیورسٹی انتظامیہ اس  کو نظر انداز کر رہی ہے اگر کل تک یونیورسٹی انتظامیہ اور خود وائس چانسلر نے بھوک ہڑتال اہلکار کی چھ نکاتی  مطالبات پر غور نہیں کیا اور تمام ٹیچر  اہلکار کی بھوک ہڑتال کو ختم کرنے کے لئے پہل نہیں کیا  تو ہماری  تنظیم انصاف منچ  اور بھی کئی سماجی تنظیم بھوک ہڑتال اہلکار کی حمایت میں دھرنا کے مقام  پر بیٹھے گا اور جب تک مانگوں  پر وائس چانسلر صاحب کی طرف سے کوئی ٹھوس یقین دہانی  نہیں کرایا  جائے گا تب تک یہ جنگ جاری رہے گی. مسٹر نے نياز احمد نے وائس چانسلر سے یہ بھی مطالبہ کیا ہے کہ یونیورسٹی میں جو اصول و ضوابط  کی دھجياں اڑائی جا رہی ہے اور غلط طریقے سے بغیر ٹینڈر کے یونیورسٹی کے پیسوں کا بندر بانٹ کیا جا رہا ہے اس پر بلا تاخیر روک لگائی  جائے ورنہ اس معاملے پر بھی یونیورسٹی انتظامیہ کے خلاف جلد ہی تحریک کا آغاز کیا جائے گا جس کی ساری ذمہ داری  موجودہ  وائس چانسلر کی ہوگی.
Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *