ریاستی انتخابات میں سیکولر امیدواروں کو ووٹ دینے کی اپیل

دہشت گردی کے خاتمہ کے لیے ہندوستان اور پاکستان کا باہمی تعاون ایک اچھا قدم: مفتی مکرم احمد
Mufti Mukarram Ahmadنئی دہلی، یکم اپریل(پریس ریلیز) مسجد فتحپوری، دہلی کے امام مفتی محمد مکرم احمد نے آج نماز جمعہ سے قبل خطاب میں کہا کہ پرامن معاشرہ کی تشکیل اوربقاء باہمی کا جذبہ پروان چڑھنا چاہیے اور مذہب اسلام میں مثبت فکر کو قابل تحسین ماناگیا ہے ۔حضور ﷺ نے مدینہ منورہ کے قرب وجوار میں بسنے والے یہودیوں اور دوسرے طبقات سے انسانیت اورامن کے لیے معاہد کیا تھا اور آپ کی تعلیم قیامت تک کے لیے مشعل راہ ہے۔ شاید دیگر مذاہب میں بھی اسی جذبہ کی ہمت افزائی کی گئی ہوگی، لہذا ہندوستان میں پرُ امن ماحول کو پروان چڑھانا وقت کی اہم ضرورت ہے ۔
مفتی مکرم احمد نے کہا کہ مغربی بنگال ، آسام اور دیگر ریاستوں میں انتخابات ہو رہے ہیں۔ اس میں ہمیں یقین ہے کہ ووٹر سیکولر امیدواروں کو ہی ووٹ دیں گے۔ فرقہ پرستی اور اشتعال انگیزی سے عوام کا شدید نقصان ہے۔ ملک کی ترقی اور خوشحالی جو آج ہمارے سامنے ہے، وہ سیکولر جمہوری آئین کی دین ہے۔ اپنے اور وطن عزیز کے فائدہ کے لیے ضروری ہے کہ صاف ستھرہ ذہن رکھنے والے امیدواروں کو متحد ہوکر کامیاب بنایا جائے تاکہ فرقہ پرستوں کو کراری شکست ہواورملک میں پرسکون ماحول بنے ۔
انہوں نے آرایس ایس اور بی جے پی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ایک سیاسی پارٹی کاکہنا ہے کہ ’بھارت ماتا کی جے‘ کا نعرہ نہ لگانا آئین کی توہین ہے لیکن یہ سراسر غلط ہے اور صحیح بات یہ ہے کہ اس نعرہ کو سب پر تھوپنا اور تشدد کرنا آئین کی توہین ہے۔ حکومت کو ایسے شرپسند لوگوں کے خلاف کارروائی کرنی چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ ۲۵؍مارچ کو بیگم پور علاقہ میں مدرسہ کے طلبا کو اسی نعرہ کی ضد میں شدید زد وکوب کیا گیا۔ اس طرح کی حرکتوں پر جلد روک لگانے اور قانونی کارروائی کرنے کی ضرورت ہے ۔
مولانا مفتی مکرم احمد نے مرکزی حکومت سے اپیل کی کہ وہ ہر شہری کے تحفظ او رامن وسلامتی کے لیے اپنے فرائض کو انجام دے اور مسلم پرسنل لا ،یعنی شریعت کے قانون میں کوئی مداخلت نہ کرے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ ایسا کوئی اقدام مسلمانوں کو قبول نہیں ہو گا ۔
مسجد فتحپوری کے امام نے کہا کہ پٹھان کوٹ حملہ کی تفتیش کے لیے پاکستانی ٹیم کو اجازت دینے اور دہشت گردی کے مسئلہ کو مشتر کہ تعاون کے ساتھ حل کرنے کی کوشش کرنے کی حکومت ہند کی پالیسی کی تعریف کی جانی چاہیے۔انہوں نے مزید کہاکہ دونوں ملکوں کے تعاون سے اس لعنت کا خاتمہ ہو سکتا ہے ۔انہوں نے لاہور میں تین چار روز قبل شدید دہشت گردانہ حملہ کی مذمت کی اور اسے غیر اسلامی ظالمانہ عمل قرار دیا ۔مفتی مکرم احمد نے ہلاک شدگان کے ورثاء کے ساتھ اظہار ہمدردی کیا ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *