شریعت میں مداخلت مسلم خواتین برداشت نہیں کر سکتی ہے… ڈاکٹر حنا فاروقی

سہرسہ…. (نمائندہ ):- سہرسہ شہر کی مشہورلیڈی

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر حنا فاروقی

ڈاکٹر  محترمہ ڈاکٹر حنا فاروقی  نے  کہا کہ   تین طلاق بل خواتین کی ہمدردی کے بہانے شریعت میں مداخلت اور آئین ہند میں ملی مذہبی آزادی پر حملہ ہے، جسے ہم مسلم خواتین کسی بهی حال میں قبول اور برداشت نہیں کرسکتے .ہمیں ہماری شریعت جان سے بهی زیادہ عزیز ہے . ہم خواتین پہلے بهی اپنے دین و شریعت کے پابند تهے اور آج بهی ہیں -. حکومت ہماری شریعت میں مداخلت کا خواب چهوڑ دے.  وہ سہرسہ شہر کے  میر ٹولہ میں واقع مدرسہ امجدیہ میں ایک پریس کانفرنس میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے  درج بالا خیالات کا اظہار کیا  -اس موقع پر ریڈ کراس کی رکن محترمہ ڈاکٹر کوکب سلطانہ نے کہاکہ حکومت کا طلاق مخالف بل مسلم پرسنل لاء میں کهلی مداخلت اور قرآن پاک کے نظام طلاق پر ظالمانہ حملہ ہے . ہم مسلمان عورت کسی قیمت پر مسلم پر سنل لاء سے دست برادری اور قرآن پاک سے دوری قبول نہیں کر سکتے ، حکومت کا طلاق مخالف بل گہری سازش کا نتیجہ ہے ، جس کا مقصد مسلمانوں کو پریشان کرکے اسکی اقدامی صلاحیت کو کچلنا، نوجوانوں کو بلا وجہہ ہراساں کرنا، جیل میں بند کرانا اور آباد خاندان کے نظام کو درہم برہم کرنا ہے .
اس موقع پر سابق وارڈ کانسلر مسرت پروین نے کہاکہ آئندہ 14 مارچ کو منعقد ہونے والی ریلی کی تیاریاں زور شور سے کیا جاری ہے اور پرامن خاموش احتجاجی  جلوس اصلاح معاشرہ و تحفظ شریعت کے زیر اہتمام نکالا جائیگا ، جس میں ضلع کے سبھی  10  بلاکوں اور سہرسہ ہیڈ کوارٹر کے سبهی  40 وارڈوں سے ہزاروں کی تعداد میں خواتین مختلف سڑکوں سے پٹیل میدان تک پہونچے گی اور ریلی کی شکل میں خاموشی اختیار کر کلکٹریٹ تک پہونچ کر  ضلع مجسٹریٹ کو   صدر جمہوریہ ، وزیر اعظم اور بہار کے گورنر نام   میمورنڈم  سونپا جائیگا.
پریس کانفرنس میں صوفیہ رخسانہ ، صائمہ پروین ، شہلہ انور ، مہہ جبیں نوری  بھی  موجود تهی.

Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *