نتیش کمار یوگی آتیہ ناتھ کی طرز پر بہار کی حکومت چلا رہے ہیں: مشکور احمد


آئے دن ہو رہی ماب لنچنگ پر راجد اور کانگریسیوں کی خاموشی لمحۂ فکریہ
پٹنہ:( پریس ریلیز۔)  پچھلے کئی مہینوں سے بہار میں مآب لنچنگ کی وارداتوں میں کافی اضافہ ہوا ہے۔ ابھی حال میں سیتامڑھی،ارریہ، نوادہ اور نالندہ میں بھیڑ نے بے قصوروں کو شکار بناکر مار دیا۔ایسا لگتا ہے کہ نتیش کمار بھی اُترپردیش کے وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ کے طرز پر بہار حکومت کو چلانا شروع کرچکے ہیں جس سے اُن کی منشاء صاف جھلک رہی ہے کہ یہ بھی مسلمانوں کے خلاف ایک سازش کے تحت مآب لنچنگ کے واردات کو انجام دے کر مسلمانوں میں دہشت کا ماحول بناکر ہندوتو کے ایجنڈا کو مضبوط کررہے ہیں اور اس طرح کے ننگے کھیل میں نتیش کمار کا ساتھ راجد اور کانگریس بھی اندرخانے سے دے رہے ہیں۔ مذکورہ باتیں بہار شریف باشندہ سماجی کارکن مشکور احمد نے پریس بیان جاری کر کہی۔ مسٹرمشکور نے آگے کہا کہ بہار میں جس طرح سے مسلمانوں کو مآب لنچنگ کے نام پر ان دنوں مارا جارہا ہے اُس سے بہار کے مسلمانوں میں دہشت اور خوف کا ماحول پیدا ہوگیا ہے۔ ساتھ ہی ایسا معلوم پڑتا ہے کہ بہار میں نتیش کمار جو سوشان بابو کے نام سے جانے جاتے رہے ہیں اب اُن کے رہتے بہار میں پھر سے جنگل راج۔2 کی واپسی ہوچکی ہے اور بہار ان دنوں شرپسندعناصروں کے ہاتھوں کا کھلونا بن چکا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ نتیش کمار خاموشی اختیار کر مسلمانوں کے خلاف بھاجپا کے ایجنڈا کو مضبوطی دینے کا کام کررہے ہیں تاکہ 2019 کے انتخاب میں ہندوتو کے نام پر ووٹ بٹور کر پھر سے حکومت کرنے کا موقع ملے۔ مسٹرمشکورنے راجد اور کانگریس پارٹی کو بھی آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہا کہ ان دونوں پارٹیوں کو مسلمانوں کا ووٹ چاہئے لیکن مسلمانوں فلاح و بہبود اور تحفظ کے لئے ان کے پاس کوئی ایجنڈا نہیں ہے۔ لگاتار مسلمانوں کو بہار میں مارا جارہا ہے اور یہ دونوں پارٹیاں نتیش کمار کی حمایت میں لگی ہے تاکہ مسلمان ڈر کر ایک بار پھر سے عظیم اتحاد کو ووٹ دے کر حکومت میں لائے اور یادووں کا بول بالا ہوجائے اور بہار میں پچھلی حکومت میں جس طرح سے مسلمانوں کا مارا کاٹا جاتا رہا ہے پھر سے اُسی طرز پر مسلمانوں کو جہاں تہاں فساد کے نام پر مارنے کاٹنے کا سلسلہ شروع ہوجائے۔وقت رہتے مسلمان اگر سیاسی پارٹیوں کی چال کو نہیں سمجھ سکے تو آنے والے لوک سبھا اور اسمبلی انتخاب میں پھر سے مسلمانوں کو ووٹ بینک کے طور پر استعمال کرلیا جائے گا اور مسلمان پھر سے سیاسی پارٹیوں کی غلامی میں جکڑ جائیں گے۔ اس لئے اب وقت آگیا ہے کہ مسلمان اتحاد کا مظاہرہ کریں اور ہوشمندی کے ساتھ آئندہ انتخاب میں اپنے ایجنڈا کے ساتھ ہی کسی بھی سیاسی پارٹیوں کی حمایت دینے کی بات کریں۔اخیر میں مسٹرمشکور نے بہار کے وزیراعلیٰ نتیش کمار سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ آئے دن بہار میں ہورہی ہی قتل و غارت گری پر قابو کریں نہیں تو 2019 میں ہی اس ننگے کھیل کا جواب مسلمان دینے کو مجبور ہوں گے۔
Facebook Comments
Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply