نتیش کماراپناموقف واضح کریں،جمہوریت پسندوں کےساتھ ہیں یافرقہ پرستوں کےساتھ؟

*نتیش کماراپناموقف واضح کریں،جمہوریت پسندوں کےساتھ ہیں یافرقہ پرستوں کےساتھ؟*
*اےایم یوطلبہ یونین کےسکریٹری حذیفہ عامر رشادی اورشاہنوازبدرقاسمی کاکشن گنج کےمختلف احتجاجی دھرنوں سےخطاب*

 

 

کشن گنج،5فروری:
گزشتہ شب علی گڑھ مسلم یونیورسٹی طلبہ یونین کے سکریٹری حذیفہ عامر رشادی اور مشہورسماجی کارکن وصحافی شاہنوازبدرقاسمی کی کشن گنج تشریف آوری ہوئی، یہاں انہوں نے جمعیۃ علماء کشن گنج کے ترجمان وسکریٹری مفتی محمد مناظر نعمانی کی رہبری میں شہریت ترمیمی بل کے خلاف ہورہے مختلف احتجاجی دھرنوں اور پروگراموں میں شرکت کی،حذیفہ عامر رشادی جہاں علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کے ترجمان اور وہاں اسٹوڈنٹس یونین کے سکریٹری ہیں وہیں وہ اپنے اندر قوم وملت کے لئے دل درد مند بھی رکھتے ہیں، انہوں نےکشن گنج کے پواخالی میں دستور ہند بچاؤ کمیٹی کے زیر انتظام منعقد احتجاجی دھرنا سے پرزور اور پر مغز خطاب کیا جس میں انہوں نے کہا کہ شہریت ترمیمی بل ہندوستان کی جمہوریت اور یہاں کی آئین کے خلاف ہے، انہوں نے حکومت وقت کو نشانہ بناکر کہا کہ ملک میں ڈھیروں مسائل ہیں جن پر بات ہونی چاہئے اور جس طرف حکومت کی نظر ہونی چاہئے، بالخصوص ملک اقتصادی پسماندگی کی آخری حدوں کو چھو رہاہے اور بے روزگاری بڑھتی جارہی ہے، یہاں کی چھوٹی بڑی صنعتیں تباہی کے دھانے پر ہیں اور دیگر بے شمار مسائل ہیں جن پر حکومکت کو سنجیدگی کے ساتھ غور کرنے کی ضرورت ہے مگر حکومت چوں کہ ناکارہ اور نکما لوگوں کی ہے اس لئے وہ اپنی ناکامی کو چھپانے کے لئے یہاں نفرت کی سیاست کررہی ہے، انہوں نے کہا کہ ہندوستان وہ مٹی ہے جہاں انیکتا میں ایکتا ہے، جہاں کی مٹی میں پیار اور محبت ہے مگر نفرت کے ان پجاریوں کو یہاں کی محبت اور بھائی چارگی سے بیر ہے اس لئے وہ لڑاؤ اور سیاست کرو پر یقین رکھتے ہیں، انہوں نے کہا حکومت کو ہم ان کے ارادوں میں کبھی کامیاب نہیں ہونے دیں گےانہوں نےآخرمیں بہارکےوزیراعلی نتیش کمارسےپوچھاکہ آپ اپناموقف واضح کیجےکہ آپ جمہوریت پسندوں کےساتھ ہیں یاپہرفرقہ پرستوں کےساتھ،بہکاوےکی سیاست اب نہیں چلنےوالی ہے_

ان کے ساتھ قافلہ میں شریک صحافی اورسماجی کارکن شاہنوازبدرقاسمی جوملی مسائل پر کافی گرفت اور ملکی سیاست پر بالغ نظری کے حوالہ سے جانے پہچانے جاتے ہیں انہوں نے بھی ان احتجاجی دھرنوں سے پر مغز خطاب کیا انہوں نے کہا کہ شہریت ترمیمی بل کے خلاف شاہین باغ دہلی،جامعہ ملیہ،جے این یو اورعلی گڑھ مسلم یونیورسٹی وغیرہ سے اٹھنے والی آواز اب ملک کے گوشہ گوشہ تک پہونچ چکی ہے، وہ سرکار جو ایک انچ پیچھے نہ ہٹنے کی بات کررہی تھی آپ کے ان ہی احتجاجوں کی بدولت ان کے سر اب بدل گئے ہیں، انہوں نے کہا کہ اس کے باوجود ہمیں ابھی بیٹھنا نہیں ہے جب تک کہ حکومت پورے طور پر اس بل کو واپس نہیں لے لیتی، جس کی زوردار تالیوں اور فلک شگاف نعروں سے لوگوں نے تائید کی، واضح رہے کہ جناب حذیفہ عامر رشادی اپنے قافلہ کے ساتھ پواخالی، بہادرگنج، سونتھا ہاٹ اور بھٹہ ہاٹ کے احتجاجی دھرنوں اور پروگراموں میں شریک ہوئے،

ہر جگہ کے لوگوں نے اعظم گڑھ یوپی اور سہرسہ سے تشریف لائے ہوئے اپنے ان مہمانوں کا زوردار استقبال کیا اور ان کے خطاب سے مستفید ہوئے،اس احتجاجی وفدمیں اےایم یوطلبہ یونین کےسابق صدرابوعفان فاروقی،طلبہ لیڈراحمرفریدی،رخسان عامر،عارف اقبال اورفہداعظمی شامل رہے،حذیفہ عامررشادی نےکشن گنج میں واقع اےایم یوسینٹرکابہی معائنہ کیااورطلبہ وانتظامیہ سےملاقات کیا_

Facebook Comments
Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply