ملک میں امن و امان کا قیام ضروری ہے… مولانامحمدناظم

پٹنہ ( نمائندہ)…… یہ ملک ہماراہے،برسوں ہم نے اس ملک پر حکومت کی ہے ،اور اس کی تعمیر وترقی میں اپناخون اور پسینہ بہایاہے،اور جب انگریز اس ملک پر ناجائز قابض ہوگیا،تو آزادی کا نعرہ سب سے پہلے ہم نے ہی لگایاتھا،دارالعلوم دیوبند کے قیا م کایہی مقصد تھاکہ وہاں سے ایسے افراد تیارکئے جائیں جو ملک وقو م کی تعمیر وترقی کے ساتھ انگریزوں کو اس ملک سے بھگانے میں اہم کردار پیش کریں،دارالعلوم دیوبندکے سب سے پہلے طالب علم ،جنہیں آج دنیاشیخ الہند کے نام سے جانتی ہے ،ان کے سامنے ملک کا پوارامنظر نامہ تھا:کہ کس طرح انگریز اس ملک کے سیاہ وسفید کا مالک بن بیٹھاہے،انہوں نے دوطرفہ محاذآرائی کی ،ایک تو اس ملک کے اندراور ایک اس ملک سے باہر ،ریشمی رومال تحریک جو بہت زیادہ مشہور ہوئی ،ان ہی کی تحریکات کا ایک حصہ ہے،دینی تعلیمی بورڈ جمعیۃ علماء بہارکے زیراہتمام 18مارچ کوشری کرشن میموریل ہال پٹنہ میں تحریک شیخ الہند وآل بہاردینی تعلیمی کنونشن منعقد ہونے جارہاہے ،اس کایہی مقصد ہے ،یہ باتیں جمعیۃ علماء بہارکے جنرل سکریٹری جناب مولانامحمدناظم صاحب قاسمی نے مسجد عبدالقدیرخان عالم گنج پٹنہ میں مشاورتی نشست سے خطاب کرتے ہوئے کہیں،واضح رہے کہ تحریک شیخ الہند وآل بہاردینی تعلیمی کنونشن کے مقاصد اور ایجنڈوں سے عوام وخواص کو باخبر کرنے کیلئے آج مسجد عبدالقدیر خان عالم گنج پٹنہ میں مشاورتی نشست رکھی گئی تھی،جس میں کثیر تعدادمیں عالم گنج ،تریپولیہ اور قرب وجوارکے لوگ شریک ہوئے، جمعیۃ علماء بہارکے جنرل سکریٹری جناب مولانا محمدناظم صاحب قاسمی نے اس موقع پر اہم خطاب بھی فرمایا،انہوں نے کہا:ہم مسلمان ہیں ،اور شاندارروایتیں ہماری تاریخ کا حصہ ہیں،اس کی حفاظت ضروری ہے ،اس طرح کے پروگرام کا مقصد یہی ہے کہ ہم اپنی قربانیوں سے خود بھی واقفیت حاصل کریں اور دنیاوالوں کو روشناش کرائیں،ہم امن والے ہیں اور امن چاہتے ہیں،اسلام نے ہمیں یہی سکھایا ہے ،مگر کچھ لوگ کرسی اقتدارکے حصول کے لئے امن وامان کو فساد میں بدلدیناچاہتے ہیں ،ملک میں نفرت کی بیج بورہے ہیں ،صورت حال ایسی ہے کہ اسلام اور مسلمان کانام لیناہی جرم بن گیاہے،ایسے میں عدم تشددکی راہ اپناتے ہوئے نفرت کا جواب محبت سے دیناضروری ہوگیاہے،مولاناموصوف نے جمعیۃ علماء ہندکی تاریخ سے لوگوں کو واقفیت کراتے ہوئے دینی تعلیم کی اہمیت پر بھی روشنی ڈالی ،اور فرمایا:دنیاکی ہرتعلیم اپنے بچوں کو دلائیں،لیکن دینی تعلیم ضروردلوائیں،اور منظم مکاتب کی کوشسیں کریں،تحریک شیخ الہند کنونشن کا ایک مقصد یہ بھی ہے ،کنونشن کے ایجنڈوں کی وضاحت کرتے ہوئے انہوں نے کہا: شیخ الہند حضرت مولانامحمودحسن دیوبندیؒ کی تحریک،تحریکِ ریشمی رومال کے پیغام کوعام کرنے ،دینی،تعلیمی فضا ہموار کرنے،قومی یکجہتی کے فروغ اور تعمیر وطن کی فکرپیداکرنے،دینی تعلیمی بیدای مہم کے ذریعہ گاوں،گاوں،مکاتب دینیہ قائم کروانے،مسلم پرسنل لا ء کا تحفظ، امت مسلمہ کو عزم وحوصلہ کی تلقین کرتے ہوئے،صبروتحمل اور استقامت فی الدین کی ترغیب دینے ودیگرحساس موضوعات پر غورفکرکرنے کیلئے 18؍ مارچ 2018ء بروزاتوار، بوقت 9؍بجے سے2؍بجے دن تک، شری کرشن میموریل ہال، پٹنہ ،جناب مولانا محمدقاسم صاحب صدرجمعیۃ علماءبہار کی صدارت میں ’’ کنونشن ‘‘ کے انعقادکا فیصلہ لیا گیاہے۔مہمان خصوصی کی حیثیت سے امیرالہند مولانا قاری سیدمحمدعثمان صاحب منصوپوری صدر جمعیۃ علماء ہند، استاذحدیث دارالعلوم دیوبند، ،قائدجمعیۃ جناب مولاناسیدمحموداسعد مدنی صاحب ناظم عمومی جمعیۃ علماء ہند کے علاوہ مختلف مذاہب کے پیشوا، تمام مکاتب فکر کے علماء اور عوام دینی،ملی،سماجی تنظیموں کے سربراہان کی شرکت بھی ہوگی ،کنونشن کے اغراض ومقاصد اور حضرت شیخ الہند ؒ کی قربانیوں سے واقفیت کے بعد موجود حاضرین نے ہرطرح کے تعاون کی یقین دلائی،مسجد عبدالقدیرخان کے امام جناب مولانادستگیر صاحب ندوی ،مولاناسہیل اخترمظفرپوری،مفتی خالدانورپورنوی ،مولانااظہارعالم قاسمی جمعیۃ علماء بہارکے اس وفد میں شریک تھے۔جناب مولاناموصوف کی رقت آمیز دعاء پر نشست اختتام پذید ہوئی۔*

Share

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *