جے این یو معاملے میں وزارت داخلہ کو اقدامات کی ہدایت

ایڈووکیٹ نازیہ الہیٰ خان کی عرضی پر پی ایم اونے اٹھائے قدم

Advocate Nazia Elahi Khanکولکاتا، ۳؍ اپریل (پریس ریلیز) جواہر لعل یونیورسٹی (جے این یو )معاملہ میں وزارت داخلہ کی جانب سے فروری کے آخری ایام میں کیے گئے اقدامات کو غیرآئینی اور غیر جمہوری قرار دیتے ہوئے وزیراعظم اور صدر جمہوریہ سے مداخلت کی درخواست کرنے والی ایڈووکیٹ نازیہ الہیٰ خان کی عرضی پر کارروائی کرتے ہوئے وزیراعظم دفتر(پی ایم او) نے وزارت داخلہ کے سکریٹری کواس پر اقدام کرنے کی ہدایت دی ہے ۔
پی ایم او کے سیکشن افسر برہمو رام کی جانب سے ۲۲؍مارچ کو وزارت داخلہ کے سکریٹری کو مکتوب بھیج کر کہاگیا ہے کہ ایڈووکیٹ نازیہ الہیٰ خان کی عرضی مناسب کارروائی کے لیے انہیں سونپی جارہی ہے ،وہ حسب حال اس پر اقدام کریں اور اس کے نتائج سے فریقین کو آگاہ کرتے رہیں ۔پی ایم او نے اس ہدایت نامہ کی نقل ایڈووکیٹ نازیہ الہیٰ خان کو بھی بھیجی ہے۔
یاد رہے کہ فورم فارآرٹی آئی ایکٹ اینڈ اینٹی کرپشن کی سربراہ اور معروف سماجی کارکن ایڈووکیٹ نازیہ الہیٰ خان نے اس معاملہ میں گذشتہ ۲۹؍فروری کو احتجاجاًکولکاتا شہر کے مصروف ترین چوراہے مولاعلی کراسنگ پر اپنے کارکنوں کے ساتھ مرکزی وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ کا پتلا نذرآتش کیاتھا ۔اس کے ساتھ ہی انہوں نے ایک عرضداشت بھی مقتدر حکام کو بھیجی تھی جس میں کہاگیا تھا کہ جے این یو میں طلبا کے ساتھ ہوئی کارروائی غیرآئینی اور جمہوریت مخالف ہے ۔احتجاج اور تنقید کرنے والے طلبا کے خلاف سنگدلانہ کارروائی کرکے وزارت داخلہ نے جمہوریت کا گلا گھونٹا ہے اور مخالفین کاگلا دبانے کی کوشش کی ہے ۔ نیز حکومت کی سرپرستی میں جمہوری ہندوستا ن میں ہندو تو کو تھوپنے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ آل انڈیا ودیارتھی پریشد (اے بی وی پی) جیسی بھگوا تنظیمیں تعلیمی اداروں پرا پنے زعفرانی نظریات تھوپ رہی ہیں جس کے خلاف کارروائی ہونی چاہیے اور ہر جگہ قانون کی حکمرانی یقینی بنائی جائے تاکہ کوئی شدت پسند، تخریب کار بھگوانمائندہ اپنی من مانی نہ کرسکے اور طلبا و طالبات کی زندگی سے کھلواڑ نہ کرے ۔PMO letter

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *