آر ایس ایس والے پہلے شادی کریں: اسدالدین اویسی

اگر ہمارے وزیر اعظم میاں بیوی کے درمیان ہو نے والے ’پوتر بندھن‘ کو مانتے تو شاید آج جوحالات ہیں، ایسے نہیں ہو تے۔

نئی دہلی: ہمارے وزیر اعظم نے اعلان کر دیا کہ میں شریعت میں مداخلت کروں گا، انہوں نے کہا کہ تین طلاق غلط ہے، میں مسلم بہنوں کے ساتھ انصاف کروں گا، جبکہ ان کو پتہ ہی نہیں ہے کہ بیوی کے شوہر پر کیا حقوق ہیں؟ ان خیالات کا اظہار، ممبرِ پارلیمنٹ اسدالدین اویسی نے یہاں ایوان غالب میں لمرا فاؤنڈیشن، شاہین باغ، نئی دہلی کے زیرِ اہتمام منعقدہ “تحفظ شریعت کانفرنس” میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ اگر ہمارے وزیر اعظم میاں بیوی کے درمیان ہو نے والے ’پوتر بندھن‘ کو مانتے تو شاید آج جوحالات ہیں، ایسے نہیں ہو تے۔
اسد الدین اویسی نے کہا کہ وزیر اعظم کے ۵۶ انچ کے سینے میں اچانک مسلم ماں بہنوں کو انصاف دلا نے کا درد اٹھا اور وہ کہنے لگے کہ ‘میں مسلم ماں بہنوں کو انصاف دلاؤں گا۔’ مگر، ان کی رہا ئش گاہ ۷ ریس کورس سے محض چند کیلو میٹر کے فاصلے پر جے این یو میں ایک مسلم ضعیف ماں اپنے بیٹے نجیب کی بازیا فت کے لیے۵۰ دن سے دہائی دے رہی ہے جس کی آواز ان کے کانوں تک نہیں پہنچتی۔ ایسا دہرا رویہ کیوں ہے کہ اس ماں کے لیے ان کے سینے میں درد نہیں جا گ رہا ہے؟ اس ماں کی آہ و بکا ان کے کا نوں تک کیوں نہیں پہنچتی ہے؟
انہوں نے کہا کہ اگر واقعی مودی مسلمانو ں کے سچے ہمدرد ہیں تو وہ اس بوڑھی بیوہ (ذکیہ جعفری) کی چیخ و پکار پر توجہ دیں جس نے گجرات فسادات کے دَوران اپنے شوہر احسان جعفری کو کھو دیا۔ اس کی آنکھوں کے سامنے ہی اس کے شوہر کے کئی ٹکڑے کردیے گئے اور جلایا بھی گیا۔ اتفاق کی بات یہ ہے کہ اس ریاست کے وزیر اعلیٰ ہمارے وزیر اعظم ہی تھے۔ کیا مودی اس بیوہ کو انصاف دلائیں گے؟
اسدالدین اویسی نے کہا کہ یوپی کے مسلمانوں اور ان کے علما نے ۱۵ سال پہلے کہہ دیا کہ زَرعی زمین میں ہم بچیوں کو حصہ دیں گے۔ کیا وزیر اعظم یوپی الیکشن میں جملے بازی کے بجائے صحیح معنوں میں تمام بچیوں کو زَرعی زمین میں حصہ دیں گے؟ انہوں نے کہا کہ کیا ریاستِ گوا کے اس قانون کو ختم کرینگے جس کے مطابق اگر کوئی شادی شدہ خاتون ۲۵ سال تک بچہ پیدا نہیں کرتی ہے یا ۳۰ سال تک صرف بچی ہی پیدا کرتی ہے تو اس کے شوہر کو دوسری شادی کا اختیا ر حاصل ہے؟
انہوں نے کہا کہ آر ایس ایس والے یونیورسٹیوں اور کالجوں میں جا کر تین طلاق پر خوب بحث کر رہے ہیں۔ میں ان سے کہنا چاہوں گا کہ آرایس ایس والے پہلے خود شادی کریں اس کے بعد طلاق پر بات کریں۔ انہوں نے زور دے کر کہا: علم ،’علامہ گو گل‘ سے نہیں، بلکہ علامہ یٰسین اختر مصباحی کے قدموں میں ملے گا، روحانی علم کے لیے مفتی مکرم کی بارگاہ میں حاضری دینی ہوگی اور شرعی باریکیوں کے لیے مفتی نظام الدین سے رابطہ کرنا ہوگا۔ اسد الدین اویسی نے کہا کہ آج یونیفارم سول کوڈ کو نافذ کرنے کی بات کی جا رہی ہے، جبکہ لا کمیشن یونیفارم سول کوڈ کی تعریف کرنے سے عاجز ہے۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ پہلے کامن سول کوڈ کا ڈرافٹ پیش کیا جائے۔ حکومت کا مقصد طلاق کے مسئلے کو چھیڑ کر یوپی الیکشن میں مسلمانوں اور ہندئوں کے درمیان نفرت پیدا کرنے کے سوا کچھ اور نہیں ہے۔
وزیراعظم نے اپنے حالیہ بیان میں کہا کہ ’میں ایک فقیر انسان ہوں۔‘ جبکہ حقیقت میں انہوں نے اپنے ایک فیصلے کے ذریعہ سارے ہندوستانیوں کو فقیر بنا دیا۔ وزیر اعظم، فقیر کیسے ہوسکتے ہیں؟ صحیح معنوں میں فقیر توخواجہ اجمیری، خواجہ نظام الدین اولیا اور دیگر اولیائے کرام ہیں، جن کی فقیری میں آج بھی شہنشاہی جاری ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *