سعودی عرب پر اسرائیل سے ساز باز کا الزام


نئی دہلی، (نامہ نگار): امام کاؤنسل آف انڈیا کے صدر مولانا مقصودالحسن قاسمی نے سعودی عرب کے حکمراں خاندان آل سعود پر اسرائیل سے ساز باز کا الزام لگاتے ہوئے کہا ہے کہ خادم حرمین شریفین ہونے کا دعویٰ کرنے والے یہ لوگ کبھی بھی مسلمانوں کے حامی نہیں رہے ہیں۔
مولانا قاسمی نے سعودی عرب میں شیعہ عالم دین شیخ نمر باقر النمرکی سزائے موت پر عمل آوری کے خلاف نئی دہلی میں منعقدہ ایک جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آل سعود نے ہمیشہ اپنی حکومت بچانے کے لیے مسلمانوں کے مفادات کا سودا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سعودی حکمرانوں نے کبھی فلسطین کے مظلومین کے حق میں آواز بلند نہیں کی اور جب کسی دوسرے حکمرانوں نے ظالم اسرائیل کے خلاف اقدام کرتے ہوئے فلسطینی عوام کے لیے کچھ کرنے کی کوشش کی تو آل سعود نے حتی المقدور اس کی مخالفت کی۔
مولانا قاسمی نے کہا کہ مصر میں جب پہلی بار جمہوری طریقے سے منتخب ہوکر صدر محمد مرسی کی قیادت میں حکومت بنی اور انہوں نے سرحد پر ایک چھوٹا سا راستہ کھول کر غزہ پٹی کے لوگوں کو تھوڑی راحت پہنچانے کی کوشش کی تو آل سعود نے ڈالر دے کر اور اسرائیل کی مدد سے ان کی حکومت کا تختہ پلٹ کروا دیا۔
امام کاؤنسل آف انڈیا کے صدر نے آل سعود پر ہمیشہ مسلمانوں کے خلاف اقدام کرنے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ جب بیسویں صدی کے اوائل میں برطانوی حکمراں خلافت عثمانیہ کا خاتمہ کررہے تھے تو وہ اپنے اسلامی بھائیوں کی بجائے برطانیہ کے ساتھ تھے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *