مولانا عبدالمتین نعمانی کے انتقال پر تعزیتی اجلاس

وجیہ احمد تصور کے قلم سے ✍️

سہرسہ… مدرسہ جامعہ دار غنیمت تیلیا ہاٹ میں مسلم پرسنل لا بورڈ کے فعال ممبر اور مشہور عالم دین حضرت مولانا عبدالمتین صاحب نعمانی کے انتقال پر ملال کے موقع کی مناسبت سے ایک تعزیتی نشست  حافظ محمد شکیل ہاشمی کی صدارت اور مولانا منت اللہ کی نظامت میں منعقد ہوا. اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے جمیعت علماء کے ضلع سکریٹری مولانا انظر علی مفتاحی نے حضرت مولانا کے علمی، عملی اور قومی خدمات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ وہ اعلیٰ کردار کے مالک تھے جن کی صلاحیتوں کو پہچان کر ہی مسلم پرسنل لا بورڈ جیسی قومی تنظیم میں ان کو ممبر بنا کر اعلی ذمہ داری سونپی گئی. وہ کافی سادگی بھری زندگی گذارتے تھے. مولانا ضیا الدین ندوی نے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مولانا عبدالمتین صاحب امام و خطیب کی حیثیت سے فاربس گنج کو جو پہچان دی ہے وہ انکی علمی صلاحیت اور اعلی کردار کا ایک نمونہ ہے. ان کا انتقال پورے بہار کے لئے بہت بڑا نقصان ہے. تعزیتی اجلاس کو مولانا مرحوم کے چھوٹے بھائ اور ریٹائرڈ بی اے او محمد قسیم نے ان کی کئ خوبیوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ وہ ہمیشہ اور ہر وقت دین کی خدمت کے لئے تیار رہتے تھے اس کے باوجود گھر کی ذمہ داریوں سے وہ کبھی نہیں بھاگے اور ہمیشہ ہملوگوں کی رہنمائی کرتے تھے. اس موقع پر حافظ شکیل نے تعزیتی نظم پیش کیا. ان کے علاوہ مولانا صدام حسین، راشد اقبال اور ممتاز عالم نے نعت رسول مقبول پیش کیا. جبکہ مفتی نصراللہ، ڈاکٹر قمرالہدئ نے بھی اپنے تاثرات کا اظہار کیا.

اس موقع پر قاری عبدالناصر، الحاج سبط حسن، رفیع الزماں، داروغہ ابصار الحسن، ماسٹر انوارِ الحسن، قاری ذوالفقار، قاری گلزار، مولانا محبوب، مختار عالم، محمد ناظم، محمد سہیل احمد، عبدالودود، قاری عبدالرحمن، عیسی رحمانی، عبدالمتین، مولوی اعجاز، مولانا مسرور قاسمی، ماسٹر کفیل احمد، محمد ذاکر، مظلوم، رئیس الدین، مظہر عالم وغیرہ موجود تھے.
Facebook Comments
Spread the love
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  

Leave a Reply