ٹیم انڈیا کی بنگلہ دیش پر ایک رن سے جیت

اسپورٹس ڈیسک

india-beat-bangladesh-in-world-t20بنگلورو، ۲۳؍ مارچ، (سی این ایم ) ٹیم انڈیا نے ٹی ۔۲۰ عالمی کپ کے ۲۵؍ ویں میچ میں بنگلہ دیش کے ہاتھ سے جیت چھین کرایک رن سے بازی مار لی۔ بنگلہ دیش نے ٹاس جیت کر ٹیم انڈیا کو بلے بازی کی دعوت دی لیکن آسان وکٹ ہونے کے باوجود ہندوستانی ٹیم بہت بڑا اسکور کھڑا نہیں کرسکی اور مقررہ ۲۰؍ اووروں میں ۷؍ وکٹ کے نقصان پر صرف ۱۴۶؍ رن بناسکی۔ ٹیم انڈیا کی طرف سے سریش رینا نے دو چھکوں کی مدد سے ۲۱؍ گیندوں پر ۳۰؍ رن بنائے جبکہ وراٹ کوہلی کا بلہ بہت زیادہ نہیں چل پایا اور وہ صرف ۲۴؍ رن بنا کر بولڈ ہوگئے ۔

قابل ذکر ہے کہ ٹیم انڈیا کے سلامی بلے بازوں نے قدرے بہتر شروعات کرتے ہوئے ۴۲؍ رن جوڑے لیکن بعد میں آنے والے کھلاڑی کوئی کمال نہیں دکھاپائے اور ٹیم کسی طرح ۱۴۶؍ رنوں کے اسکور تک پہنچ سکی۔

بنگلہ دیش کی ٹیم جب ہدف کا پیچھا کرنے اتری تو شروع ہی میں اس کو روی چندرن اشون نے جھٹکا دے دیا، لیکن پھر تمیم اقبال اور شبیر رحمن نے اپنی ٹیم کو سنبھالا اور ایک وکٹ کے نقصان پر اسکور ۵۵؍ رنوں تک پہنچا دیا۔ اس کے بعد بھی بنگلہ دیش کا وکٹ وقفے وقفے سے گرتا رہا لیکن میچ میں ایک وقت ایسا آیا جب ٹیم انڈیا کے حامیوں کے چہروں پر مایوسی صاف جھلکنے لگی تھی کیونکہ بنگلہ دیش جیت کے بہت قریب پہنچ گیا تھا۔ میچ کے آخری اوور میں اسے جیت کے لیے ۱۱؍ رن بنانے تھے اور اس کے چار وکٹ باقی تھے۔ لیکن ہاردک پانڈیا نے لگاتار دو گیند وں میں دو وکٹ لے کر ٹیم انڈیا کی میچ میں واپسی کو یقینی بنایا۔ میچ کی آخری گیند پر بنگلہ دیش کو جیت کے لیے دو رنوں کی ضرورت تھی ، لیکن اس کے شواگتا ہوم اور مستفیض الرحمن کی جوڑی اسے حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوسکی۔ ٹیم انڈیا کے کپتان اوروکٹ کیپر ایم ایس دھونی نے مستفیض الرحمن کو رن آؤٹ کرکے جیت پر قبضہ کرلیا۔
روی چندرن اشون کو گیندبازی میں اچھی کارکردگی کے لیے مین آف دی میچ قرار دیاگیا۔ اشون نے چار اووروں میں ۲۰؍ رن دے کر ۲؍ وکٹ حاصل کیا تھا۔
ٹیم انڈیا: مہندر سنگھ دھونی( کپتان )، شکھردھون، روہت شرما، وراٹ کوہلی،سریش رینا، یووراج سنگھ، ہاردک پانڈیا، روندرا جڈیجہ، روی چندرن اشون، آشیش نہرا اور جسپریت بمراہ

بنگلہ دیش: سومیہ سرکار، محمد متھن، شبیر رحمن، شکیب الحسن، مشفق الرحیم(وکٹ کیپر)، محموداللہ، شواگتا ہوم، مشرف مرتضی (کپتان)، تمیم اقبال، الامین حسین، مستفیض الرحمن

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *