​حکومت صارفین کو راحت پہنچانے کے لیے کوشاں ہے: وزیر تیل

نئی دہلی، ۱۷؍ دسمبر(نامہ نگار): ہندوستان کے وزیر برائے تیل و قدرتی گیس دھرمیندر پردھان نے آج کہا کہ حکومت صارفین پر زیادہ بوجھ نہیں ڈالنے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ انہوں نے یہ بات یہاں کنفڈریشن آف انڈین انڈسٹری کے ذریعہ توانائی سلامتی کے موضوع پر منعقدہ سالانہ کانفرنس کے موقع پر میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت صارفین کو راحت دینے کے لیے اس وقت ٹیکس میں کٹوتی کرسکتی ہے ، جب بین الاقوامی بازار میں خام تیل کی قیمت میں اچھال آئے گا۔

دھرمیندر پردھان نے کہا:’’اگر ہمیں یہ محسوس ہوگا کہ صارفین پر قیمتوں کا بوجھ پڑرہا ہے ، تو اس صورت میں ہم ٹیکس میں کمی کرسکتے ہیں۔ عالمی بازار میں خام تیل کی قیمت ایک چکر کی صورت میں گردش کرتی ہے۔ آج ، یہ نیچے کی طرف جارہی ہے۔ آئندہ قیمتوں میں اضافہ ہوسکتا ہے۔ ہماری ترجیح صارفین کو لگاتار راحت پہنچانے کی ہے۔‘‘

وزیر پٹرولیم نے یہ باتیں حکومت کے ذریعہ پٹرول پر ۳۰؍ پیسے اور ڈیزل پر ایک روپے ۱۷؍ پیسے ٹیکس بڑھانے کے بعد کہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان ایک فلاحی ریاست ہے۔ ملک کے عوام کی حکومت سے کچھ توقعات ہوتی ہیں۔ ہم عوام کو سڑک اور بجلی کے علاوہ طبی سہولتیں فراہم کرانے کے لیے کوشاں ہیں۔ان سب سے کے لیے خطیر رقم کی ضرورت پڑتی ہے۔آخر یہ پیسے کہاں سے آئیں گے؟ س سوال کے ساتھ ہی انہوں نے یہ بھی کہا کہ فی الحال تیل کی قیمت کم ہے لیکن آئندہ اس میں اضافہ ہوسکتا ہے، اس لیے ہم ایک طرف جہاں فلاحی کاموں کے لیے رقم کا انتظام کر رہے ہیں ، وہیں عالمی بازار میں خام تیل کی قیمتوں میں اضافے کے باوجود لوگوں پر اس کا منفی اثر نہ پڑے ، اس سمت میں بھی کام کررہے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *