جسیم محمد کی کتابوں کا ڈاکٹر ہرش وردھن نے اجراء کیا

ڈاکٹر جسیم محمد کے ذریعہ سرسید کی کتابوں کا ہندی ترجمہ ایک اہم کام : ہرش وردھن

sir-syeds-book-present-and-release-by-dr-harsh-vardhan
نئی دہلی (نامہ نگار):مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے دہلی کے غالب انسٹی ٹیوٹ میں ڈاکٹر جسیم محمد کے ذریعہ سرسید کی کتابوں اور خود سرسید پر تصنیف کردہ کتابوں کے ہندی تراجم کے علاوہ ڈاکٹر جسیم محمد کی تصنیف کردہ کتاب ’سرسید احمد خاں اور علی گڑھ موومنٹ‘ کا اجراء کیا۔
یہاں غالب انسٹی ٹیوٹ میں محفل صنم کے زیر اہتمام منعقدہ پروگرام میں مرکزی وزیر ڈاکٹر ہرش وردھن نے ڈاکٹر جسیم محمد کے ذریعہ سرسید احمد خاں کی اردو تصنیف ’’اسباب بغاوت ہند‘‘ اور مولانا الطاف حسین حالی کی سرسید پر تحریر کردہ کتاب ’’حیاتِ جاوید‘‘ کے ہندی ترجمہ کا اجراء کرتے ہوئے کہا کہ سرسید احمد خاں بر صغیر ہند کے نہ صرف عظیم ماہر تعلیم تھے بلکہ سماجی اصلاح کے میدان میں بھی انہوں نے قابل ذکر خدمات انجام دیں۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر جسیم محمد کے ذریعہ سرسید کی تصنیفات اور سرسید کی حیات و خدمات پرتحریر کردہ کتاب کا ہندی زبان میں ترجمہ کیا جانا ایک بڑا کام ہے جس کی ہر سطح پر ستائش ہونی چاہیے کیونکہ ملک کے اکثریتی فرقہ کے لوگ ہندی داں ہیں اور اب ان ترجمہ کی گئی کتابوں سے وہ سرسید کی قربانیوں اور خدمات سے واقف ہوسکیں گے۔ ڈاکٹر ہرش وردھن نے کہا کہ سرسید کے افکار کی عوامی سطح پرترویج و اشاعت کے میدان میں ڈاکٹر جسیم اہم خدمات انجام دے رہے ہیں جس کے لیے وہ شکریہ اور مبارکباد کے مستحق ہیں۔
حاضرین کا شکریہ ادا کرتے ہوئے ڈاکٹر جسیم محمد نے کہا کہ ان کی زندگی اور شخصیت سازی میں اے ایم یو کا بہت بڑا رول ہے اور انہوں نے سرسید سے قربانی اور عزم کا درس لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کی خواہش ہے کہ سرسید کے تعلیمی مشن کو ملک کے کونے کونے میں پہنچائیں جو ملک کی ترقی کے لیے بھی ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے نوجوان طبقہ اور ہندی داں طبقہ کو سرسید سے ترغیب حاصل ہو ا س لیے انہوں نے مذکورہ کتابوں کا ہندی میں ترجمہ کیا ہے۔
اس تقریب میں دوردرشن کی ایڈیشنل ڈائرکٹر دیپا چندرا، ہمالیہ ڈرگس کے ڈاکٹر محمد فاروق، ڈاکٹر شہلا نواب اور ڈاکٹر محمد فرقان نے بھی شرکت کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *