ہمیں فخر ہے کہ بال ٹھاکرے لشکر کے نشانے پر تھے: شیو سینا

تصویر: بشکریہ اے این آئی
تصویر: بشکریہ اے این آئی

ممبئی، ۲۴ مارچ (ایجنسی): اپنے متنازع بیان کی وجہ سے سرخیوں میں رہنے والی مہاراشٹر کی سیاس پارٹی شیو سینا نے آج عجیب و غریب بیان دیا ہے کہ اسے اس بات پر فخر ہے کہ بال ٹھاکرے دہشت گرد تنظیم لشکر طیبہ کے نشانے پر تھے۔

شیو سینا لیڈر سنجے راؤت نے ممبئی دہشت گردانہ حملوں کے سلسلے میں امریکی جیل میں عمر قید کی سزا کاٹ رہے ڈیوڈ کول مین ہیڈلی کے انکشاف پر اپنا ردِ عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ یہ ان کے اور ان کی پارٹی کے لیے فخر کی بات ہے کہ بال ٹھاکرے لشکر کی ہٹ لسٹ میں تھے۔

راؤت نے خبر رساں ایجنسی ایشین نیوز انٹرنیشنل (اے این آئی) کو بتایا کہ ’’لشکر طیبہ نے ایک قاتل کو شیو سینا چیف کو مارنے کے لیے مامور کیا تھا لیکن وہ مشن کامیاب نہیں ہوا۔ اس معاملے میں ممبئی پولس نے بھی ایک مشتبہ شخص کو گرفتار کیا تھا، لیکن وہ پولس کی حراست سے بھاگ نکلا۔ میں یہ پوچھنا چاہتا ہوں کہ پولس نے اس حقیقت کو چھپایا کیوں۔ جیل سے بھاگنے والا وہ شخص کون تھا اور وہ کیسے بھاگا؟ اس کے پیچھے سازش کیا تھی؟ ممبئی پولس اور اس وقت کی ریاستی حکومت کو اس سوالوں کا جواب دینا ہوگا۔ اس وقت کے پولس کمشنر سے اس سلسلے میں پوچھ گچھ کی جانی چاہیے۔‘‘

راؤت نے مزید کہا کہ ’’اس میں ہمیں کوئی حیرانی نہیں ہے، کیوں کہ بالا صاحب ہمیشہ ایک حقیقی وطن پرست رہے اور انھوں نے پاکستان اور دہشت گردوں کے ذریعہ کی جانے والی غلط حرکتوں کی ہمیشہ مخالفت کی۔ ہمیں اس بات پر فخر ہے کہ بالا صاحب لشکر طیبہ کی ہٹ لسٹ میں تھے۔‘‘

قابل ذکر ہے کہ ۲۰۰۸ میں ممبئی دہشت گردانہ حملے میں ملوث ہونے کی وجہ سے امریکہ نے پاک نژاد اپنے شہری ڈیوڈ ہیڈلی کو عمر قید کی سزا دے رکھی ہے۔ سرکاری گواہ بننے کے بعد ہیڈلی نے آج ممبئی کی عدالت کو بتایا کہ لشکر طیبہ بال ٹھاکرے کا قتل کرانا چاہتا تھا، لیکن جس شخص کو یہ ذمہ داری دی گئی تھی، اسے پولس نے گرفتار کر لیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *