شریعت میں مداخلت ناقابل برداشت : ویمن انڈیا موومنٹ

تین طلاق اورتعدد ازداوج کی آڑ میں مسلمانوں پر یکساں سول کوڈ تھوپنے کی سازش: یاسمین فاروقی
img-wim-two
جے پور( پریس ریلیز) :
ویمن انڈیا موومنٹ (ڈبلیو آئی ایم) کے زیر اہتمام جے پور ہوٹل انڈیانا میں منعقد ایک اخباری کانفرنس میں تنظیم کی قومی صدر محترمہ یاسمین فاروقی نے کہا کہ ویمن انڈیا موو منٹ یکساں سول کوڈ کے معاملے میں آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے موقف کی بھرپور حمایت کرتی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ویمن انڈیا موومنٹ کسی بھی صورت میں ملک کے کسی بھی طبقے کے پرسنل لاء اور مسلم پرسنل لاء میں مداخلت برداشت نہیں کرے گی۔ مرکزی حکومت اپنی ناکامیوں کو چھپانے اور اتر پردیش سمیت ملک کی پانچ ریاستوں میں ہونے والے اسمبلی انتخابات کو مد نظر رکھتے ہوئے یکساں سول کوڈ کے نام پر مسلمانوں کو پریشان کررہی ہے۔ انہوں نے مرکزی حکومت پر ہندو ووٹوں کو اکٹھا کرنے کی کوشش کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ اس کے لیے وہ لاء کمیشن کے توسط سے تین طلاق اورتعدد ازدواج کی آڑ میں مسلمانوں پر یکساں سول کوڈ تھوپنے کی سازش کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ شرعی معاملات میں علماء کو فیصلہ کرنے کا حق ہے اور اس میں سرکاری دخل اندازی قطعی برداشت نہیں کی جائے گی۔ آئینی حقوق کے مطابق مسلم خواتین کو اپنی مرضی کے مطابق نکاح کرنے کا حق حاصل ہے، اسلام میں نکاح ایک طرح کا معاہدہ ہے جبکہ ہندو اور دیگر مذاہب میں شادی زندگی بھر کا رشتہ سمجھا جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سماج میں طلاق کو پسند نہیں کیا جاتا لیکن دو افراد کے درمیان اتفاق نہیں ہونے کی وجہ سے طلاق کی نوبت آتی ہے۔ عدالتوں میں طلاق کے معاملے برسوں تک چلتے ہیں جس سے شوہر اور بیوی کا مستقبل بہتر بنانے کے امکانات ختم ہوجاتے ہیں۔ محترمہ یاسمین فاروقی نے کہا کہ ویمن انڈیا موومنٹ کی جانب سے یکساں سول کوڈ کے نفاذ کی سخت مخالفت کی جائے گی اور اس تعلق سے خواتین میں بیداری لائی جائے گی۔ انہوں نے مسلمانوں اور خاص طور پر مسلم خواتین سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ تمام جمہوری حقوق کا استعمال کرتے ہوئے مرکزی حکومت کی جانب سے یکساں سول کوڈ کے نفاذ کی کوششوں کو ناکام بنائیں۔ ویمن انڈیا موومنٹ کی ریاستی صدر محترمہ مہر النساء خان نے حکومت کے منشاء پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ حکومت آئین ہند کی آڑ لے کر یکساں سول کوڈ کی تو بات کرتی ہے لیکن مسلمانوں میں تعلیم، بے روزگاری اور صحت سے متعلق مسائل پر اس کا رویہ مایوس کن ہے۔ انہوں نے کہا کہ قرآن میں طلاق کے تعلق سے واضح ہدایات موجود ہیں اور انہیں ہدایات کے مطابق مسلمان طلاق و خلع دیتے آرہے ہیں۔ انہوں نے دیگر طبقات کے لوگوں سے بھی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس معاملے میں مسلمانوں کا ساتھ دیں۔ ویمن انڈیا موومنٹ کی قومی صدر یاسمین فاروقی نے کہا کہ اس معاملے میں جب تک انصاف نہیں مل جاتا تب تک اپنی جدوجہد جاری رکھیں گے اور خواتین کے درمیان جاکر ان میں بیداری پیدا کریں گے۔ اس موقع پر ریاستی خازن ایڈووکیٹ پروین بیگم، ریاستی ورکنگ کمیٹی رکن محترمہ فریدہ غذدار،جے پورضلعی سکریٹری محترمہ رفعت سلطانہ اور دیگر عہدیدارن موجود رہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *